سمندر میں اُترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں| وصی شاہ |

سمندر میں اُترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں| وصی شاہ |
سمندر میں اُترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں| وصی شاہ |

  

سمندر میں اُترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تمہارا نام لکھنے کی اجازت چھن گئی جب سے

کوئی بھی لفظ لکھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تری یادوں کی خوشبو کھڑکیوں میں رقص کرتی ہے

ترے غم میں سلگتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

میں ہنس کے جھیل لیتا ہوں جدائی کی سبھی رسمیں

گلے جب اسکے لگتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

وہ سب گزرے ہوئے لمحات مجھ کو یاد آتے ہیں

تمہارے خط جو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

ترے کوچے سے اب میرا تعلق واجبی سا ہے

مگر جب بھی گزرتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

ہزاروں موسموں کی حکمرانی ہے میرے دل پر

وصی میں جب بھی ہنستا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

شاعر: وصی شاہ

 ( شعری مجموعہ:آنکھیں بھیگ جاتی ہیں؛سال اشاعت،1997)

Samandar   Men   Utarta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

Tiri   Aankhon   Ko   Parrhta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

 Tumhaara   Naam   Likhnay   Ki   Ijaazat   Chhin   Gai   Jab   Say

Koi   Bhi   Lafz   Likhta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

 Tiri   Yaadon   Ki   Khushbu   Khirrkiun   Men   Raqs   Karti   Hay

Tiray    Gham   Men   Sulagta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

Main   Hans   K   Jhail   Laita   Hun   Judaai   Ki   Sabhi   Rasmen

Galay   Jab   Uss   K   Lagta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

 Wo   Sab   Guzray   Huay   Lamhaat   Mujh   Ko   Yaad    Aatay   Hen

Tumhaaray   Khat   Jo   Parrhta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

 

 Tiray   Koochay   Say   Ab   Mera   Taaluqq   Waajbi   Sa   Hay

Magar   Jab   Bhi   Guzarta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

 Hazaaron   Maosmon   Ki   Hukmaraani    Hay   Miray   Dil   Par

WASI    Main   Jab   Hansta   Hun   To    Aankhen   Bheeg   Jaati   Hen

 Poet: Wasi   Shah

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -