یہ حادثہ مجھے حیران کر گیا سر شام| پیزادہ قاسم |

یہ حادثہ مجھے حیران کر گیا سر شام| پیزادہ قاسم |
یہ حادثہ مجھے حیران کر گیا سر شام| پیزادہ قاسم |

  

یہ حادثہ مجھے حیران کر گیا سر شام

جو زخم صبح ملا تھا وہ بھر گیا سر شام

یہ آج کس کو اچانک مرا خیال آیا

چراغِ راہ میں یہ کون دھر گیا سر شام

تمام دن کی تھکن سے میں بجھ رہا تھا مگر

کسی کی یاد کا چہرہ نکھر گیا سر شام

شبِ فراق کا احوال یاد آ ہی گیا

پھر ایک تیر سا دل میں اتر گیا سر شام

یہ صبح و شام مرے اس قدر ہی میرے ہیں

کہ جی اُٹھا ہوں سحر دم تو مر گیا سر شام

شاعر: پیر زادہ قاسم

 ( شعری مجموعہ:تیز ہوا کے جشن میں؛سالِ اشاعت،1990)

Yeh   Haadsa   Mujahay    Hairaan   Kar   Gaya   Sar-e-Shaam

Jo   Zakhm  Subh   Mila   Wo   Bhar   Gaya   Sar-e-Shaam

 Yeh   Aaj   Kiss   Ko   Achaanak   Mira   Khayaal    Aaya

Charaagh   Raah   Men   Yeh   Kon   Dhar   Gaya   Sar-e-Shaam

 Tamaam   Din   Ki   Thakan   Say   Main   Bujh   Raha   Tha   Magar

Kisi   Ki   Yaad   Ka   Chehra   Nikhar   Gaya   Sar-e-Shaam

 Shab-e-Firaaq   Ka   Ahwaal   Yaad   Aa   Hi   Gaya

Phir   Aik   Teer   Sa   Dil   Men   Utar   Gaya   Sar-e-Shaam

 Yeh   Subh -o-Shaam   Miray   Iss   Qadar   Hi   Meray   Hen

Keh   Ji   Utha   Hun   Sahar   Dam   To    Mar   Gaya   Sar-e-Shaam

 Poet: Pirzada   Qasim

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -