نظر میں نت نئی حیرانیاں لیے پھریے | پیزادہ قاسم |

نظر میں نت نئی حیرانیاں لیے پھریے | پیزادہ قاسم |
نظر میں نت نئی حیرانیاں لیے پھریے | پیزادہ قاسم |

  

نظر میں نت نئی حیرانیاں لیے پھریے 

سروں پہ روز نیا آسماں لیے پھریے 

اب اس فضا کی کثافت میں کیوں اضافہ ہو 

غبارِ دل ہے سو دل میں نہاں لیے پھریے 

یہی بچا ہے سو اب زیست کی گواہی میں 

یہی نشانِ دل بے نشاں لیے پھریے 

قرارِجاں تو سرِ کوئے یار چھوڑ آئے 

متاعِ زیست ہے لیکن کہاں لیے پھریے 

عجب ہنر ہے کہ دانشوری کے پیکر میں 

کسی کا ذہن کسی کی زباں لیے پھریے 

شاعر: پیرزادہ قاسم

 ( شعری مجموعہ:تیز ہوا کے جشن میں؛سالِ اشاعت،1990)

Nazar   Men   Nit   Nai   Hairaaniyaan   Liay   Phiriay

Saron   Pe   Roz   Naya   Aasmaan   Liay   Phiriay

 Ab   Uss   Fazaa   Ki   Kasaafat   Men   Kiun    Izaafa   Ho

Ghubaar-e-Dil   Hay   So   Dil   Men   Nihaan   Liay   Phiriay

 Yahi   Bachaa   Hay   So   Ab   Zeest   Ki   Gawaahi   Men

Yahi   Nishaan-e-Dil   Be  Nishaan   Liay   Phiriay

 Qaraar-e-Jaan   To   Sar-e-Koo-e-Yaar    Chhorr   Aaey

Mataa-e-Zeest   Hay    Lekin   Kahaan   Liay   Phiriay

 Ajab   Hunar   Keh   Danashwari   K   Paikar   Men

Kisi    K   Zehn   Kisi   Ki   Zubaan   Liay   Phiriay

 Poet: Pirzada   Qasim

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -