اُس کی آواز پہ باہر نہیں آتا کوئی| کاشف حسین غائر |

اُس کی آواز پہ باہر نہیں آتا کوئی| کاشف حسین غائر |
اُس کی آواز پہ باہر نہیں آتا کوئی| کاشف حسین غائر |

  

اُس کی آواز پہ باہر نہیں آتا کوئی

اِس محلے میں گداگر نہیں آتا کوئی

جس سے ملیے وہ فرشتہ یا خدا ہوتا ہے

آدمی مجھ کو میسر نہیں آتا کوئی

جب کہ دیواریں بھی موجود ہیں، دروازے بھی

بات کیا ہے جو مرے گھر نہیں آتا کوئی

ہے وہی شہر کو ویرانہ بنانے والا

اور الزام اُسی پر نہیں آتا کوئی

چاند تارے ہوں ، پرندے ہوں کہ بادل غائر

تم نہیں آؤ تو چھت پر نہیں آتا کوئی

شاعر: کاشف حسین غائر

( کاشف حسین غائر کی وال سے)

ٗUss   Ki   Awaaz   Pe   Baahar   Nahen   Aata   Koi

Iss  Mahallay   Men   Gadaagar   Nahen   Aata   Koi

 Jiss    Say   Miliay    Wo   Farishta   Ya   Khuda   Hota   Hay

Aadmi   Mujh   Ko   Muyassar   Nahen   Aata   Koi

 Jab   Keh   Dewaaren    Bhi   Maojood   Hen   ,   Darwaazay   Bhi

Baat   Kaya   Hay   Jo   Miray   Ghar   Nahen   Aata   Koi

Hay    Wahi    Shehr   Ko   Veraana   Banaanay   Waala

Aor     Ilzaam   Usi   Par     Nahen   Aata   Koi

 Chaand    Taaray   Hon  ,   Parinday    Hon    Keh   Baadal   Ghayar

Tum    Nahen    Aao   To   Chhat   Par   Nahen   Aata   Koi

Poet: Kashif    Hussain   Ghayer 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -