بہار آئی تو گلزار میں چمک آئی| کاشف حسین غائر |

بہار آئی تو گلزار میں چمک آئی| کاشف حسین غائر |
بہار آئی تو گلزار میں چمک آئی| کاشف حسین غائر |

  

بہار آئی تو گلزار میں چمک آئی

جو دیکھا یار کو تو یار میں چمک آئی

لگا ہوا ہے لہو اس پہ بے گناہوں کا

یونہی نہیں، تری تلوار میں چمک آئی

عدو سے جنگ کرے اتنا حوصلہ ہی نہ تھا

جو مجھ کو دیکھا تو سالار میں چمک آئی

حضور اسے بھی ہوا آسرا شفاعت کا

طبیب دیکھ کے بیمار میں چمک آئی

وہ ایک نور لٹاتا ہوا حسیں پیکر

کہ جس سے مصر کے بازار میں چمک آئی

شاعر:کاشف حسین غائر

( کاشف حسین غائر کی وال سے)

Bahaar   Aai   To   Gulzaar    Men   Chamak   Aai

Jo   Daikha   Yaar   Ko   To   Yaar    Men   Chamak   Aai

 Laga   Hua   Hay   Lahu   Iss   Pe   Be   Gunaahon   Ka

Yun   Hi   Nahen   Tiri   Talwaar    Men   Chamak   Aai

 Udu   Say   Jang   Karay    Itna   Hoslaa   Hi   Na   Tha

Jo   Mujh    Ko   Daikha   To   Salaar    Men   Chamak   Aai

 Huzoor   Isay   Bhi   Hua    Aasra   Shafaat   Ka

Tabeeb    Daikh    K   Bemaar    Men   Chamak   Aai

 Wo   Aik   Noor   Lutaata   Hua   Paikar

Keh   Jiss   Say   Misr   K   Bazaar    Men   Chamak   Aai

 Poet: Kashif   Hussain   Ghayer

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -