حساس اداروں کی حوصلہ شکنی سے ملک کمزور ہو رہا ہے: ملک سہیل

حساس اداروں کی حوصلہ شکنی سے ملک کمزور ہو رہا ہے: ملک سہیل

اسلام آباد(آن لائن) وفاقی دارلحکومت کی تاجر برادری نے کہا ہے کہ ملک کے اندرونی حالات اتنے تشویشناک ہو گئے ہیں کہ کسی بیرونی جارحیت کے بغیر ہی ملک ٹوٹ سکتا ہے ۔صورتحال بگڑتی جا رہی ہے مگرسیاستدان بے پرواہ اور عوام متحد ہونے کے بجائے منتشر ہوتے جا رہے ہیں۔ان حالات میںملک کے دفاعی ادارے جوہماری بقاءکی جنگ لڑ رہے ہیں پر بلاجوازتنقید کر کے انکی حوصلہ شکنی کے بجائے ہر ممکن اخلاقی حمایت کی ضرورت ہے تاکہ وہ دلجمعی سے اپنے فرائض پورے کر سکیں۔ اور اگر ملک نہ بچا تو ہم بھی نہیں بچیں گے۔ ان خیالات کا اظہار چئیرمین میڈیا ایف پی سی سی آئی ملک سہیل جو قومی تاجر اتحار کے نائب صدر بھی ہیں نے کاروباری برادری سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انھوں نے کہا کہ پاکستان دنیا کا واحد ملک ہے جہاں ملکی سلامتی کے ضامن اداروںبشمول مسلح افواج، ایف سی،آئی ایس آئی اور ایم آئی کے خلاف میڈیا سمیت ہر فورم پر محاز کھولا جا چکا ہے ۔کڑی تنقید کے بعد اب فوجداری مقدمات کا اندراج شروع ہو چکا ہے جو پاکستان کی سالمیت کے خلاف گہری سازش ہے ۔ملک سہیل نے کہا کہ پا کستان کو بچانے کے لئے جانوں کا نذرانہ پیش کرنے والے کو کمزور کرنے سے صرف ملک کے دشمنوں کو فائدہ پہنچے گا۔پاکستان اس وقت 1971 سے زیادہ مشکل صورتحال سے دوچار ہے جسے مشکل سے نکالنا ہم سب کا فرض ہے ۔ اس موقع پر چئیرمین رابطہ ایف پی سی سی آئی عاطف اکرم شیخ،سید ندیم منصور، امین پیرزادہ، لیاقت علی نون، یوسف راجپوت، حاجی محمد نعیم، عمران الحق،شکیل عزیز اور راجہ حسن اختر نے کہا کہ دفاعی اداروں کے خلاف مقدمات ملک دشمنوں کی سازش ہے جس میں بہت سے اپنے بھی انجانے میں شریک ہو گئے ہیں۔انھوں نے آئی ایس آئی اور ایم آئی کے سربراہوں اور دیگر افسران کے خلاف مقدمات کی مزمت کرتے ہوئے کہا کہ وہ ملک بچائیں یا پیشیاں بھگتے پھریں۔اداروں کا ٹکراﺅ ہمیں کہیں کا نہیں چھوڑے گا۔دہشت گردوں اور انتہا پسند و عسکریت پسندافراد و تنظیموںکی خاطر ملک کو کمزور کرنا اغیار کے ہاتھوں میں کھیلنے کے مترادف ہے ۔تاجر پہلے کاروبار کی تباہی کو روتے تھے اب تو ملک کا مستقبل ہی مخدوش نظر آ رہا ہے جس نے راتوں کی نیندیں اڑا دی ہیں۔

مزید : کامرس


loading...