جعلی ادویات کے ہزاروں کیس فائلوں میں دفن ، مافیا شکنجے میں آنے سے بچ گیا

جعلی ادویات کے ہزاروں کیس فائلوں میں دفن ، مافیا شکنجے میں آنے سے بچ گیا

  

لاہور( جاویداقبال ) جعلی ادویات بنانے اور فروخت کرنے والے ڈرگ مافیا کے ہزاروں کیس فائلوں میں دفن کر دیئے گئے جس سے جعلی ادوایات کا دھندہ کر کے انسانی زندگیوں سے کھیلنے والے ڈرگ مافیا کے خلاف تیار کیے گئے شکنجے میں ان کی گرد ن آنے سے بچ جانے کے امکانات پیدا ہو گئے ہیںیہ کیس ضلعی اور صوبائی ڈرگ کوالٹی کنٹرول بورڈز کے دفاتر فائلوں میں دفن ہیں اس مافیا کے کیسز ڈرگ کورٹ کے چئیرمین جہانگیر چوہدری نے طلب کیے مگر صوبائی ڈرگ کوالٹی کنٹرول بورڈ نے حقائق چھپا لیے اور ڈرگ کورٹ کو بوگس رپورٹ دی کہ ان کے پاس صرف400کیس ہیں جنہیں جلد پیش کر دیا جائے گا۔اس وقت ڈرگ کورٹ میں جعلی ادویات کے صرف آٹھ کیس زیر سماعت ہیں اور بقایا کیس صوبائی ڈرگ کوالٹی کنٹرول بورڈ اور ضلع لاہور کے بورڈ میں التواء میں رکھے گئے ہیں جس سے جعلی ادویات کا دھندا کرنے والا مافیا کھلے عام آزاد یہ دھندا کر رہا ہے۔بتایا گیا ہے کہ ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹریز میں دوران ٹیسٹنگ سینکڑوں کمپنیوں کی ادویات غیر معیاری اور جعلی ثابت ہونے پر یہ کیس مزید کارروائی کیلئے محکمہ صحت کے مذکورہ بورڈز میں گاہے بگاہے بھجوائے دوران چیکنگ ادویات جعلی قرار پائیں اطلاع پا کر ڈرگ کورٹ کے چئیرمین جہانگیر چوہدری نے محکمہ صحت کے ذریعے مذکورہ بورڈز کو حکم دیا کہ یہ کیس بمع ڈی ٹی ایل رپورٹس کورٹس میں جمع کروائے جائیں تاکہ ایسے دھندے میں ملوث کمپنیوں کیخلاف کارروائی کی سماعت شروع کی جائے اس حوالے سے چئیرمین نے صوبائی بورڈ کے چیف ڈرگ کنٹرول ذکاء اللہ اور ایڈیشنل سیکرٹری ڈرگ کنٹرول ڈاکٹر میر کو بھی گزشتہ دنوں طلب کیا اور انہیں ہدایات کیں کی جعلی ادویات کے جو کیسز صوبائی بورڈ میں التوا ء میں رکھے گئے ہیں ا نہیں پیش کیا جائے مگر اس حکم پر بھی عمل درآمد نہیں ہو سکا ۔اس حوالے سے چیف ڈرگ کنٹرولر رانا ذکاء اللہ سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ فہرست تیار کی جا رہی ہے وقت کی کمی اور مصروفیا ت کے باعث کیس ڈرگ کورٹ بھجوانے میں تاخیر ہوئی مگر بہت جلد یہ کیس ڈرگ کورٹ کو ریفر کر دیئے جائیں گے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -