پنجاب حکومت کی بیوروکریسی میں اکھاڑ پچھاڑ کا امکان

پنجاب حکومت کی بیوروکریسی میں اکھاڑ پچھاڑ کا امکان

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور(محمد نواز سنگرا)پنجاب حکومت میں بیوروکریسی میں وسیع پیمانے پر اکھاڑ پچھاڑ کا امکان پیدا ہو گیا ہے جس کے مطابق اعلیٰ افسران کو تبدیل کیا جائے گا جن میں سیکرٹریز اور کمشنرزشامل ہیں جبکہ الیکشن کمیشن پنجاب کے اعلیٰ ذرائع کا کہنا ہے کہ جو افسران انتخابی عمل میں براہ راست کردار ادا نہیں کرتے ان کی تبدیلی پر الیکشن کمیشن کو اعتراض نہیں مزید فیصلہ حکومت کے رجوع کرنے پر کیا جائے گا۔ ذرائع نے بتایا کہ ایڈیشنل چیف سیکرٹری سید مبشر رضا جو کہ27 اکتوبر میں ریٹائرڈ ہو رہے ہیں تو ان کی جگہ کمشنر گوجرانوالہ خواجہ شمائل کو ایڈیشنل چیف سیکرٹری پنجاب لگائے جانے کا امکان ہے۔خواجہ شمائل اس سے قبل سیکرٹری ایکسائز،آئی ٹی ،سیکرٹری جنگلات اور مختلف اضلاع میں ڈی سی او راہ چکے ہیں ۔کمشنر راولپنڈی زاہد سعید جو کہ اس وقت حج پر ہیں ان کو ایم ڈی اورنج لائن میٹرو ٹرین لگایا جائے گا اور ان کی جگہ سیکرٹری انفارمیشن مومن آغا کو کمشنر راولپنڈی تعینات کیا جائے گا واضح رہے کہ زاہد سعید اس سے قبل سیکرٹری ایریگیشن،سیکرٹری ایکسائز اور مختلف اضلاع میں ڈی سی راہ چکے ہیں جبکہ وہ راولپنڈی میٹرو بس میں بطور پراجیکٹ ڈائریکٹر بھی کام کر چکے ہیں ۔اعلیٰ ذرائع نے بتایا ہے کہ اس حوالے سے پنجاب حکومت ’’این او سی‘‘لینے کیلئے الیکشن کمیشن آف پاکستان سے رجوع کرے گی اور وہاں سے اجازت لے کر ان فسران کو تبدیل کیا جائے گا کیونکہ الیکشن کمیشن کی طرف سے پابندی کے بندی کی وجہ سے حکومت تقرر وتبادلوں کا اختیار نہیں رکھتی جس وجہ سے الیکشن کمیشن سے اجازت طلب کی جائے گی دوسری طرف الیکشن کمیشن پنجاب کے اعلیٰ ذرائع کا کہنا ہے کہ جو افسران انتخابی عمل میں براہ راست شامل نہیں ہیں ان کو تبدیل کرنے میں الیکشن کمیشن کو بھی اعتراض نہیں ہو گا ۔صر ف ایسے افسران جو ریٹرننگ افسران تعینات کیے گئے ہیں الیکشن کمیشن ان کے تقرروتبادلوں کی اجازت ہر گز نہیں دے گا۔مزید جب حکومت رابطہ کرے گی تو فیصلہ کیا جائے گا۔

مزید :

صفحہ اول -