الطاف عائد پابندی کے خاتمہ کیلئے نفرت انگیز تقاریر نہ کرنیکی تحریری یقین دہانی کرائیں ، ہائیکورٹ

الطاف عائد پابندی کے خاتمہ کیلئے نفرت انگیز تقاریر نہ کرنیکی تحریری یقین ...

  

 لاہور (نامہ نگار خصوصی)لاہورہائیکورٹ ایم کیو ایم کے رہنما الطاف حسین کے بیانات،تقاریر ،تصاویر اور سرگرمیوں کی خبریں نشر اور شائع کرنے پر پابندی کے عدالتی حکم پرنظر ثانی کے لئے دائر درخواست پر نوٹس جاری کرتے ہوئے قراردیا ہے کہ اگرالطاف حسین نفرت انگیزتقاریر نہ کرنے کی تحریری یقین دہانی کرائیں توعدالت اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرسکتی ہے ۔گزشتہ روز لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی پر مشتمل تین رکنی فل بینچ نے الطاف حسین کی تقاریر پر پابندی عائد کرنے کے لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے پر نظر ثانی کے لئے دائر ایم کیو ایم کی درخواست پر سماعت کی۔ایم کیو ایم کی طرف سے عاصمہ جہانگیر ایڈووکیٹ نے کہا کہ عدالت نے الطاف حسین کو نوٹس دئیے اور سنے بغیر یکطرفہ فیصلہ سنایا جو کہ آئین کے منافی ہے،جس پرعدالت نے ریمارکس دیئے کہ الطاف حسین کی شہریت کی تصدیق کئے بغیرنوٹس نہیں دئیے جا سکتے تھے۔عدالت کی نظر میں تمام شہری برابرہیں،کسی بھی شخص یا فرد کو ملکی سلامتی کے اداروں کے خلاف بات کرنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ عدالت نے قراردیا کہ قانونی حدود کے پابند شہریوں کو تحفظ فراہم کرناعدلیہ کی ذمہ داری ہے۔اگر عدالت نے کسی کو رگڑا دینا ہوتا تو رابطہ کمیٹی کے خلاف بھی سخت فیصلہ صادر کرتی۔عدالت نے کہاکہ الطاف حسین نفرت انگیزتقاریر نہ کرنے کی تحریری یقین دہانی کرائیں تو عدالت اپنے فیصلے پر نظر ثانی کرسکتی ہے ۔عدالت نے وفاقی حکومت کی جانب سے الطاف حسین کی شہریت کامبہم جواب مستردکرتے ہوئے آئندہ سماعت پرتفصیلی جواب داخل کرنے کاحکم دیتے ہوئے کیس کی مزیدسماعت 2 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

مزید :

علاقائی -