ٹیکس دہندگان پر مزید بوجھ ڈالنے کی بجائے ٹیکس کلچر کو فروغ دیا جائے ‘ یوبی سی

ٹیکس دہندگان پر مزید بوجھ ڈالنے کی بجائے ٹیکس کلچر کو فروغ دیا جائے ‘ یوبی سی

لاہور(کامرس رپورٹر)یونائٹڈ بزنس گروپ (یوبی سی) کی قیادت نے پاکستان تحریک انصاف کی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ ٹیکس دہندگان پر مزید بوجھ ڈالنے کیبجائے ٹیکس کلچر کو فروغ دیا جائے اور ان 35 لاکھ نان ٹیکس فائلرزکو ٹیکس نیٹ میں لایا جائے جن کا کھوج ایف بی آر لگا چکا ہے۔ گزشتہ روز مرکزی چیئرمین یو بی جی اور سینئر نائب صدر سارک چیمبر افتخار علی ملک نے تاجروں کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آئی ایم ایف سے رجوع سے بچنے کے لئے پاکستان کو 15سے 16 بلین ڈالر کی ضرورت ہے جس میں سے نصف سے زائد عالمی بینک، اسلامی ترقیاتی بینک اور ڈونرز کے کنسورشیم سے دو طرفہ کریڈٹ 9 بلین ڈالر کی صورت میں مل سکتے ہیں ۔

جبکہ 7 سے 8 ارب ڈالر کا باقی فرق دوست ممالک سے امداد یا آئی ایم ایف سے رجوع کر کے پورا کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ملکی معیشت ایک مشکل دور سے گزر رہی ہے اس لئے بزنس کمیونٹیمعیشت کے استحکام میں مدد دینے کے لئے وزیراعظم عمران خان کو مکمل طور پر سپورٹ کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ جامع ٹیکس اصلاحات پر تمام سیاسی جماعتوں کا اتفاق ہے، اس لئے حکومت اس معاملہ کو اپنے پہلے 100 دنوں کی ترجیحات میں اولیت دے، پارلیمنٹ ٹیکس اصلاحات کے لئے دستیاب مختلف آپشنز کو زیر بحث لا کر اس نظام میں ضروری اصلاحات کا نفاذ کرے۔ انہوں نے کہا کہ مالیاتی خسارے کو پورا کرنے کے لئے حکومت کو تمام سطحوں پر ٹیکس وصولیوں پر توجہ دینا ہوگی جو مالی سال 2017-18 میں 2.3 ٹریلین روپے یا جی ڈی پی کے 6.8 فیصد تک پہنچ چکا ہے۔ نئی وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو فوری طور پر گھر اور دفتر کے سائز کے مطابق پراپرٹی ٹیکس اور امیر و طاقتور طبقے پر کم از کم 2.5 فیصد کا متبادل ٹیکس عائد کرنا چاہیئے۔ انہوں نے کہا کہ ٹیکس ریٹرنز کا نظام آسان بنایا جائے، پنجاب ریونیو اتھارٹی کا ہیلپ ڈیسک قائم کیا جائے، سیلز اور انکم ٹیکس کی ریٹرنز کے لئے علیحدہ اکاؤنٹس قائم کئے جائیں، وفاقی اور صوبائی ٹیکس نظام کو ہم آہنگ کیا جائے، ڈبل ٹیکس کی حوصلہ شکنی کی جائے اور ان ڈائریکٹ کیبجائے براہ راست ٹیکس کی حوصلہ افزائی کی جائے۔ افتخار علی ملک نے کہا کہ تعلیمی پالیسی تیار کرتے وقت سکلز کی ترقی پر توجہ مرکوز کی جائے، کیونکہ حکومت کی توجہ تعلیم کے معیار کی بجائے یونیورسٹیوں کی تعداد بڑھانے پر ہے اور ٹیکنیکل ایجوکیشن کو نظر انداز کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سی پیک منصوبوں سے پیدا ہونے والے روزگار کے سے فائدہ اٹھانے کیلئے ملک میں ہنر مند افرادی قوت کی اشد ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ مستحکم سیاسی حکومت کے بعد مستحکم معیشت ناگزیر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک بھر کے تاجر انڈسٹری پر غیر ضروری ٹیکسوں پر بے چینی کا شکار ہیں، حکومت چین کی طرز پر تیز رفتار صنعتی ترقی کے لئے بجلی اور گیس کے ٹیرف کے خصوصی پیکیج پیش کرے کیونکہ زیادہ ٹیرف اور ٹیکس کے نتیجے میں پیداواری لاگت بڑھ رہی ہے اور ہماری مصنوعات عالمی مارکیٹ میں مقابلہ نہیں کر سکتیں جو برآمدات میں کمی کا سبب ہے۔ انہوں نے غیر ملکی اور مقامی سرمایہ کاروں کے اعتماد کو بحال کرنے کے علاوہ قومی معیشت کو مضبوط بنانے کے لئے غریب پرور، بزنس فرینڈلی اور ایکسپورٹ پر مبنی مالیاتی پالیسیاں متعارف کرانے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ یو بی جی کبھی کاروباری برادری کے مفادات پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرے گا۔

مزید : علاقائی