کوٹ ادو، دستکاری سنٹر کا مالک قتل ، رسیو ں سے بندھی لاش نہر سے بر آمد

کوٹ ادو، دستکاری سنٹر کا مالک قتل ، رسیو ں سے بندھی لاش نہر سے بر آمد

کوٹ ادو(تحصیل رپورٹر ،نمائندہ پاکستان) آئینہ ویلفےئر آرگنائزیشن کوٹ ادو کے لاپتہ ہونے والے 40سالہ شریف کی لاش نہر سے برآمدکرلی گئی ،

(بقیہ نمبر19صفحہ12پر )

والد کی رپورٹ پر6نامزد 3نامعلوم افراد کیخلاف مقدمہ درج کرلیا گیاتفصیل کے مطابق دو روز قبل آئینہ ویلفےئر آرگنائزیشن کے آفس سے اصغر نامی آڈٹ آفیسر کے ہمراہ النور ویلفئر اور دستکاری سنٹر کے اونر محمدشریف سہو گھر کی طرف موٹرسائیکل پر روانہ ہوئے، شام تک گھر نہ پہنچ سکے تلاش کرنے کے بعد بھی کوئی سراغ نہ مل سکا جبکہ اگلے روز 15پر پولیس کو پانچ مرلہ سکیم اینگرو گودام سے موٹرسائیکل کی موجودگی کی اطلاع دی گئی تھی پولیس نے موٹرسائیکل قبضہ میں لے لی ، گمشدگی کے دوسرے روز اڈہ ٹو آر تھانہ حدود سنانواں مظفرگڑھ کینال سے تشدد زدہ لاش برآمد ہوء جبکہ لاش کو رسے سے باندھا گیا تھا، کوٹ ادوپولیس نے لاش قبضے میں لیکرپوسٹمارٹم کے بعد نعش ورثاء کے حوالے کر دی ہے،پولیس کو ٹ ادو نے مقتول شریف سہو کے والد اللہ وسایا سہو کی مدعیت میں این جی اوز کے آڈٹ افیسر اصغر سمیت قاسم ہاشمی،عدنان ،سید اعجاز،عزیز جٹ سپل،منظور پٹھان سمیت3نا معلوم کے خلاف قتل کا مقدمہ نمبر628/18زیر دفعہ 364/302/148/149درج کرکے قاتلوں کی تلاش شروع کر دی ہے،اس بارے مقتول شریف سوئیہ کے والد اللہ وسایا نے بتایا کہ شریف سہو اور این جی اوز کے دیگر ساتھیوں کے ساتھ اس کا این جی او زسے چیک کا تنازعہ تھا جسکی بناء پر انہوں نے اس کے بیٹے کو قتل کر کے اسکی نعش کو رسیوں سے باندھ کر نہر میں پھینک دی ہے،دوسری طرف ورثاء غم سے شدید نڈھال ہو چکے ہیں،شریف سمرا کی چھوٹی بچیاں باپ کی راہیں دیکھتے دیکھتے شدید پریشانی میں مبتلا اور بیوی کو دورے پڑنے لگے، ورثاء نے آئی جی پنجاب، اور وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار سے نوٹس لیکر فوری قاتلوں کو گرفتار کرنے کی اپیل کی ہے۔

قتل

مزید : ملتان صفحہ آخر