مقبوضہ وادی مین 13کشمیری نوجوان کی شہادت،آزاد کشمیر میں طلباء کا احتجاج

مقبوضہ وادی مین 13کشمیری نوجوان کی شہادت،آزاد کشمیر میں طلباء کا احتجاج

مظفرآباد(وقائع نگار خصوصی)مقبوضہ جموں کشمیر میں بھارتی ریاستی دہشتگردی ، جموں کشمیر میں نوجوانوں کے قتل عام کیخلاف آزادکشمیر کے طلباء سڑکوں پر نکل آئے۔ وادی کے مختلف علاقوں میں 13 سے زاید کشمیری نوجوانوں کی شہادت اور بھارتی فورسز کی جانب سے شہید کی لاش کو سڑک پر گھسیٹے جانے کیخلاف پاسبان حریت جموں کشمیر اور انٹرنیشنل فورم فار جسٹس اینڈ ہیومن رائٹس جموں کشمیر کے زیر اہتمام پوسٹ گریجویٹ کالج مظفرآباد سے شہید چوک تک ریلی کا انعقاد، سینکڑوں طلباء کی شرکت، بھارت مخالف نعروں سے فضا گونج اٹھی، ریلی میں شریک طلباء نے ہاتھوں میں پلے کارڈز اور بینرز بھی اٹھا رکھے تھے جن پر بھارتی بربریت کیخلاف اور کشمیریوں کے حق میں نعرے درج تھے۔ بھارت کا جنگی جنون جنوبی ایشیاء کے امن کیلئے خطرے کی گھنٹی، مقبوضہ جموں کشمیر میں بے گناہ کشمیریوں کے قتل عام پر خاموش نہیں رہیں گے، بھارتی فورسز کشمیری نوجوانوں پر مہلک ہتھیاروں کا استعمال کررہی ہے، کالے قوانین کے ذریعے ہزاروں نوجوان ہندوستان کی بدنام زمانہ جیلوں میں زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا ہیں، عالمی برادری بھارتی جنگی جرائم کیخلاف کردار ادا کرے۔ شرکاء ریلی سے مقررین کا خطاب۔ ریلی میں چیئرمین پاسبان حریت جموں کشمیر عزیر احمد غزالی، وائس چیئرمین انٹرنیشنل فورم فارجسٹس مشتاق الاسلام، ڈی پی آئی کالجز پروفیسر قاضی محمد ابراہیم، پرنسپل پوسٹ گریجویٹ کالج پروفیسر ملک ارشد عزیز، پیپلزپارٹی کے رہنما شوکت جاوید میر ، حریت رہنما شہزاد وانی، عثمان علی ہاشم سمیت ڈگری کالج کے پروفیسر صاحبان اور طلباء نے بھارت کیخلاف شدید احتجاج کرتے ہوئے پوسٹ گریجویٹ کالج سے ریلی کا انعقاد کیا جو شہید چوک اپراڈہ میں اختتام پذیر ہوئی۔ اس موقع پر ریلی سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پاسبان حریت جموں کشمیر عزیر احمد غزالی نے کہا کہ بھارت کا جنگی جنون جنوبی ایشیاء کے امن کیلئے خطرہ کی گھنٹی ہے، ایک ہفتے میں بھارتی فورسز کی جانب سے مقبوضہ جموں کشمیر کے مختلف علاقوں میں 13 سے زاید بے گناہ کشمیری نوجوانوں کو شہید کیا گیا، بھارتی فورسز کی درندگی کی انتہاء ہوگئی کہ ایک کشمیری شہید کی لاش کو جس بے دردی سے گھیسٹا گیا وہ عالمی برادری کیلئے بھی لمحہ فکریہ ہے جو خاموش تماشائی کا کردار ادا کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں کشمیر کے عوام کا خون اتنا سستا نہیں کہ بھارت جب چاہے کشمیرمیں نوجوانوں کا قتل عام کرے، اقوام متحدہ بھارتی ریاستی دہشتگردی کا نوٹس لے۔ انہوں نے کہا کہ او آئی سی بھی اس وقت خاموش تماشائی ہے اور اسی خاموشی کا ہندوستان فائدہ اٹھا رہا ہے۔ انٹرنیشنل فورم فارجسٹس کے وائس چیئرمین مشتا ق الاسلام نے کہا کہ بھارتی کالے قوانین، مہلک ہتھیاروں کے استعمال، انسانیت سوز مظالم کیخلاف انٹرنیشنل فورم کے چیئرمین محمد احسن انتو نے جو مہم جموں کشمیر کے طول ارض میں شروع کررکھی ہے اور بھارتی مظالم کو عالمی سطح پر بے نقاب کرنے کیلئے کوشاں ہیں اس پر انہیں خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مقبوضہ جموں کشمیر میں جاری انسانیت سوز مظالم پر عالمی برادری کا کردار سوالیہ نشان بن چکا ہے، بے گناہ کشمیریوں کے قتل عام پر عالمی برادری کو چپ کا روزہ توڑنا ہوگا اور انسانی حقو ق پر کام کرنیوالی عالمی تنظیموں کو انسانیت سوز مظالم پر چپ نہیں رہنا چاہے۔بھارتی فورسز جموں کشمیر میں نوجوانوں پر مہلک ہتھیاروں کا استعمال کررہی ہے، ماورائے عدالتی قتل عام بھی جاری ہے، کالے قوانین کے ذریعے ہزاروں نوجوان ہندوستان کی بدنام زمانہ جیلوں میں زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا ہیں اور انہیں قانونی دفاع کرنے کا حق بھی حاصل نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی درندہ صفت فوج نے ایک شہید کی لاش کو جس بے دردی کیساتھ گھسیٹا یہ بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے دنیا میں اس قسم کے واقعات جنگی جرائم ہیں۔ عالمی ادارے جو انسانی حقو ق پر کام کررہے ہیں کو چاہیے کہ وہ مداخلت کرتے ہوئے بھارت کو جنگی جنون سے روکے اور کشمیریوں پر ڈھائے جانیوالے مظالم پر اپنا کردار ادا کرے۔ اس موقع پر ڈی پی آئی کالجز پروفیسر قاضی محمد ابراہیم نے کہا کہ ہندوستان عالمی سطح پر جنگی جرائم کا مرتکب ہو چکا ہے، بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے ہاتھ بے گناہ مسلمانوں کے خون سے رنگین ہیں جو گجرات میں قتل عام کرنے کے بعد اب کشمیر کے عوام پر مظالم کے پہاڑ توڑ رہا ہے ۔ اقوام متحدہ کو چاہیےے کہ اس وقت تماشائی نہ بنے بلکہ جموں کشمیر کے عوام پر مظالم کیخلاف اپنا کردارادا کرے۔ آزادکشمیر کے نوجوان مقبوضہ جموں کشمیر کے بھائیوں کیساتھ کھڑے ہیں وقت آنے پر کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرینگے۔ مقررین نے کہا کہ نریندرمودی کے مکروہ عزائم پوری دنیا کے امن کیلئے خطرہ بنتے جارہے ہیں، پاک بھارت کشیدگی خطرے کا الارم ہے جو ہندوستان کے مکروہ عزائم کی عکاسی ہے۔ او آئی سی ، یورپی یونین اقوام متحدہ جموں کشمیر کی موجودہ صورتحال کا نوٹس لیتے ہوئے بھارت کو مظالم سے روکے اورکشمیریوں کو حق خودارادیت دلوائے تاکہ خطہ میں امن کا قیام حقیقی معنوں میں شرمندہ تعبیر ہوسکے۔

مزید : کراچی صفحہ اول