موبائل فون مہنگے ہونے سے کتنا ریونیو اکٹھا ہو گا؟ وزیر مملکت کے انکشاف نے حامد میر کو بھی حیران کر دیا

موبائل فون مہنگے ہونے سے کتنا ریونیو اکٹھا ہو گا؟ وزیر مملکت کے انکشاف نے ...
موبائل فون مہنگے ہونے سے کتنا ریونیو اکٹھا ہو گا؟ وزیر مملکت کے انکشاف نے حامد میر کو بھی حیران کر دیا

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) وفاقی حکومت نے منی بجٹ پیش کر دیا ہے جس درآمد شدہ قیمتی موبائل فونز، 1800 سی سی سے بڑی لگژری گاڑیوں اور کھانے پینے کی درآمد شدہ قیمتی مصنوعات پر درآمدی ڈیوٹی میں اضافہ کر دیا ہے جس کے بعد ان مصنوعات کی قیمتوں میں فوری اضافہ متوقع ہے۔

معروف صحافی حامد میر نے وزیر مملکت برائے ریونیو حماد اظہر سے جب یہ پوچھا کہ موبائل فونز پر ڈیوٹی عائد کرنے سے کتنا ریونیو اکٹھا ہو جائے گا؟ تو انہوں نے ایسا انکشاف کر دیا کہ ہر کوئی حیران رہ گیا۔ انہوں نے کہا کہ اگر موبائل فونز کے معاملے کو ریگولیٹ کر دیا جائے تو 15 سے 20 ارب روپے مل سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فنانس بل میں کوئی ایک ایسا ٹیکس نہیں ہے جو کم آمدنی والوں پر لگ سکے بلکہ ٹیکس صرف اشرافیہ اور زیادہ آمدن والے لوگوں پر لگائے گئے ہیں جبکہ عام لوگوں کیلئے اس میں بہت زیادہ ریلیف ہے۔

وزیر مملکت نے کہا کہ آئی فون کی قیمت پاکستان میں ایک سے ڈیڑھ لاکھ روپے ہے لیکن گزشتہ سال کسٹم میں صرف 5 ہزار آئی فون کلیئر ہوئے لیکن اسی سال ایکٹویٹ ہونے والے آئی فونز کی تعداد 4 سے پانچ لاکھ تھی۔ یہ فون سمگل ہو کر پاکستان میں آتے ہیں اور ٹیکس ادائیگی کے بغیر ہی فروخت ہو جاتے ہیں اور صورتحال یہ ہے کہ اگر اس معاملے کی ریگولیشن کر لی جائے اور سمگلنگ روک دی جائے تو 10 سے 15 ارب روپے ریونیو اکٹھا ہو سکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ جہاں تک موبائل فونز پر کسٹم ڈیوٹی کا تعلق ہے تو 6 سے سات ہزار روپے والے موبائل فونز پر 250 روپے ڈیوٹی ہی عائد ہو گی لیکن 14 سے 15 ہزار روپے والے فون پر قیمت کی 10 فیصد اور اس سے بھی مہنگے موبائل فونز پر 20 ڈیوٹی عائد کی گئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ سمگلنگ کی روک تھام کیلئے آئی ایم ای آئی کا سسٹم پی ٹی اے کے سسٹم کیساتھ جوڑا جا رہا ہے جس کے باعث صرف وہی فون ہی ایکٹویٹ ہو سکے گا جو کسٹم میں ڈکلیئر ہو گا یعنی اس پر ٹیکس ادا کر دیا گیا ہو گا بصورت دیگر فون ایکٹیویٹ ہی نہیں ہو سکے گا۔

۔۔۔ویڈیو دیکھیں۔۔۔

مزید : قومی /ڈیلی بائیٹس