اجل سے وہ ڈریں جینے کو جو اچھا سمجھتے ہیں | اکبر الہٰ آبادی |

اجل سے وہ ڈریں جینے کو جو اچھا سمجھتے ہیں | اکبر الہٰ آبادی |
اجل سے وہ ڈریں جینے کو جو اچھا سمجھتے ہیں | اکبر الہٰ آبادی |

  

اجل سے وہ ڈریں جینے کو جو اچھا سمجھتے ہیں

یہاں ہم چار دن کی زندگی کو کیا سمجھتے ہیں

ہمیں ہے خاکساری میں بھی ڈر محسور ہونے کا

اُسے بھی ہم غبارِ خاطرِ اعدا سمجھتے ہیں

کوئی کیا سمجھے الطافِ خفی انکارِ جاناں کے

یہ رمز لن ترانی حضرت موسٰیؑ سمجھتے ہیں

تمہاری ناخوشی کا ڈر ہمیں مجبور رکھتا ہے

نہیں تو اے صنم ! اغیار کو ہم کیا سمجھتے ہیں

یقین کُفار کو آتا نہیں روزِ قیامت کا

اُسے بھی وہ تمہارا وعدہِ فردا سمجھتے ہیں

جنوں زائل ہوا، ہوش آ گیا، صحت ہوئی ہم کو

بڑے عیار ہو تم اب تو ہم اتنا سمجھتے ہیں

کس و ناکس سے کیوں سرگوشیاں کرتے ہو محفل میں

خبر بھی ہے کہ لوگ اپنے دلوں میں کیا سمجھتے ہیں ؟

رہے سر سبز گلشن اُن کی بزمِ عیش و عشرت کا

نکل جاؤں مَیں مجھ کو اگر کانٹا سمجھتے ہیں

نگاہوں کے اشارے سے جو حکم اُٹھنے کا ہوتا ہے

مجھے بھی آپ کیا دردِ دل شیدا سمجھتے ہیں

میں اپنے نقد دل سے جنس اُلفت مول لیتا ہوں

اطبا کو ذرا دیکھو اسے سودا سمجھتے ہیں

اُسے ہم آخرت کہتے ہیں جو مشغولِ حق رکھے

خدا سے جو کرے غافل اُسے دنیا سمجھتے ہیں

نثار اپنے تصور کے، کہ جس کے فیض سے ہر دم

جو ناپیدا ہے نظروں سے اُسے پیدا سمجھتے ہیں

وہ ہم کو کچھ نہ سمجھیں اے رقیبو اختیار اُن کا

یہ تم کیوں ناخوش ہو اتنے وہ تمہیں کیا سمجھتے ہیں

یہی رُخ ہے کہ جس پر پھول کا اطلاق ہوتا ہے

یہی آنکھیں ہیں جن کو نرگسِ شہلا سمجھتے ہیں

تُو وہ برقِ تجلی ہے کہ تیرے دیکھنے والے

تِرے نقشِ کفِ پا کو یدِ بیضا سمجھتے ہیں

غزل اِک اور پڑھئے آج ایسے رنگ میں اکبرؔ

کہ اربابِ بصیرت جس کو عبرت زا سمجھتے ہیں

شاعر: اکبر آلہ آبادی

(کلیات اکبر الہٰ آبادی،حصہ اول )

Ajal    Say    Wo    Daren    Jeenay    Ko    Jo    Acha    Samajhtay   Hen

Yahaan    Ham    Chaar    Din    Ki    Zindagi    Ko    Kaya    Samajhtay   Hen

Hamen    Hay    Khaaksaari    Men    Bhi    Dar    Mehsoor    Honay    Ka

Usay    Bhi    Ham    Ghubaar -e- Khaatir-e- Aadaa    Samjhtay   Hen

Koi    Kaya    Samjhay    Altaaf -e- Khafi    Inkaar-e- Janaan   K

Yeh    Ramz-e- Lan   Taraani    HAZRAT-e- MUSA    Samajhtay   Hen

Tumhaari    Na    Khushi    Ka    Dar    Hamen    Majboor    Rakhta   Hay

Nahen   To    Ay    Sanam    Aghyaar     Ko    Ham    Kaya    Samajhtay   Hen

Yaqeen     Kuffaar    Ko    Aata    Nahen    Roz -e- Qayaamat    Ka

Usay    Bhi    Wo    Tumhaara    Waada -e- Farda    Samajhtay   Hen

Junoon    Zayal    Hua    Hosh    Aa    Gaya    Sehat    Hui    Ham   Ko

Barray    Ayyaar    Ho    Tum    Ab    To    Ham    Itna    Samajhtay   Hen

Kas -o- Naakiss    Say    Kiun    Sargoshiyaan    Kartay    Ho    Mefill    Men

Khabar    Bhi    Hay   Keh    Log    Apnay    Dilon     Men    Kaya    Samajhtay   Hen

Rahay    Sar    Sabz    Gulshan   Un   Ki     Aish -o- Ishrat    Ka

Nikall    Jaaun    Main    Mujh    Ko     Agar    Kaanta    Samajhtay   Hen

Nigahon    K    Ishaaray    Say    Jo    Hukm   Uthnay    Ka    Hota   Hay

Mujhay    Bhi    Aap    Kaya    Dard -e- Dil    Shaidaa     Samajhtay   Hen

Main    Apnay    Naqd-e- Dil     Say    Jins-e- Ulfat    Mol    Leta    Hun

Itteba    Ko    Zara    Dekho    Usay    Saoda     Samajhtay   Hen

Usay    Ham    Aakhrat     Kehtay    Hen     Jo    Mashghool -e- Haq    Rakhay

Khuda    Saqy    Jo    Karay    Ghaafil    Usay    Dunya     Samajhtay   Hen

Nisaar    Apnay    Tasawwar    K    Keh    Jiss    K    Faiz    Say    Har   Dam

Jo    Na    Paida    Hay    Nazron    Say    Usay    Paida    Samajhtay   Hen

Wo    Ham    Ko    Kuch    Na   Samjhen    Ay    Raqeebo     Ikhtiyaar     Un     Ka

Yeh      Tum    Kiun    Na     Khush    Ho    Itnay    Wo    Tumhen    Kaya     Samajhtay    Hen

Yahi    Rukh   Hay    Keh    Jiss    Par   Phool    Ka    Ittelaaq    Hota   Hay

Yahi    Aankhen    Hen    Jin    Ko    Nargiss -e- Shehla      Samajhtay   Hen

Tu    Wo     Barq-e- Tajalli    Hay   Keh    Teray    Dekhnay   Waalay

Tiray     Naqsh -e- Kaf -e- Paa     Ko     Yad-e- Baiza     Samajhtay    Hen

Ghazal    Ik    Aor    Parrhiay    Aaaj    Aisay    Rang    Men     AKBAR

Keh      Arbaab-e- Baseerat     Jiss    Ko     Ibrat     Zaa     Samajhtay   Hen

Poet:Akbar     Allahabaadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -