جو اپنی زندگانی کو حباب آسا سمجھتے ہیں | اکبر الہٰ آبادی |

جو اپنی زندگانی کو حباب آسا سمجھتے ہیں | اکبر الہٰ آبادی |
جو اپنی زندگانی کو حباب آسا سمجھتے ہیں | اکبر الہٰ آبادی |

  

جو اپنی زندگانی کو حباب آسا سمجھتے ہیں

نفس کی موج کو موجِ لبِ دریا سمجھتے ہیں

گواہی دیں گے روزِ حشر یہ سارے گناہوں کی

سمجھتا میں نہیں لیکن مرے اعضا سمجھتے ہیں

شریکِ حال دنیا میں نظر آتا نہیں کوئی

فقط اک بیکسی ہے جس کو ہم اپنا سمجھتے ہیں

جو ہیں اہلِ بصیرت اس تماشا گاہِ ہستی میں

طلسمِ زندگی کو کھیل لڑکوں کا سمجھتے ہیں

معرّا ہوں ہنر سے میں سراپا عیب ہوں اکبرؔ

عنایت ہے احبا کی اگر اچھا سمجھتے ہیں 

شاعر: اکبر الہٰ آبادی

(کلیات اکبر الہٰ آبادی،حصہ اول )

Jo    Apni    Zindgaani    Ko    Hubaab    Aasaa    Samjhtay   Hen

Nafas    Ko    Maoj    Ko    Maoj-e- Lab -e- Darya    Samjhtay   Hen

Gawaahi    Den    Gay    Roz -e- Meshar     Yeh    Saaray   Gunaah

Samjhta    Main    Nahen    Lekin    Miray    Aazaa    Samjhtay   Hen

Shareek -e-Haal    Dunya    Men    Nazar    Aata    Nahen   Koi

Faqat    Ik    Be Kasi     Hay    Jiss    Ko    Ham    Apna    Samjhtay   Hen

Jo    Hen    Ehl-e-Baseerat    Iss    Tamasha    Gaah-e- Hasti    Men

Talism-e -Zindagi     Ko    Khail    Larrkon    Ka    Samjhtay   Hen

Muarraa    Hun    Hunar    Say    Main    Saraapa    Aib    Hun   AKBAR

Enaayat   Hay    Ahbaa    Ki    Agar    Acha    Samjhtay   Hen

Poet: Akbar Allah abadi 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -