بے تکلف بوسۂ زلف چلےپا لیجئے  | اکبر الہٰ آبادی |

بے تکلف بوسۂ زلف چلےپا لیجئے  | اکبر الہٰ آبادی |

  

بے تکلف بوسۂ زلفِ چلےپا  لیجئے 

نقدِ دل موجود ہے پھر کیوں نہ سودا لیجئے 

دل تو پہلے لے چکے اب جان کے خواہاں ہیں آپ 

اس میں بھی مجھ کو نہیں انکار اچھا لیجئے 

پاؤں پکڑ کر کہتی ہے زنجیر زنداں میں رہو 

وحشت دل کا ہے ایما راہ صحرا لیجئے 

غیر کو تو کر کے ضد کرتے ہیں کھانے میں شریک 

مجھ سے کہتے ہیں اگر کچھ بھوک ہو کھا لیجئے 

خوش نما چیزیں ہیں بازار جہاں میں بے شمار 

ایک نقد دل سے یارب مول کیا کیا لیجئے 

کشتہ آخر آتش فرقت سے ہونا ہے مجھے 

اور چندے صورت سیماب تڑپا لیجئے 

فصل گل کے آتے ہی اکبرؔ ہوئے بے ہوش آپ 

کھولیے آنکھوں کو صاحب جام صہبا لیجئے 

شاعر: اکبر الہٰ آبادی

(کلیات اکبر الہٰ آبادی،حصہ اول )

Be   Takalluf     Bosa -e- Zulf-e- Chalay    Paa    Lijiay

Naqd -e-Dil     Maojood    Hay    Phir    Kiun    Na    Saoda   Lijiay

Dil    To    Pehlay    Lay    Chukay    Ab    Jaan    K    Khahaan   Hen   Aap

Iss    Men    Bhi    Mujh    Ko    Nahen    Inkaar    Achha   Lijiay

Paaon    Parr    Kar    Kehti    Hay    Zanjeer    Zindaan    Men   Raho

Wehshat -e- Dil     Ka     Hay    Emaa    Raah -e- Sahar    Lijiay

Ghair     Ko   To    Kar    K    Zidd    Kartay    Hen    Khaanay    Men   Shareek

Mujh    Say    Kehtay    Hen    Agar    Kuch    Bhook    Ho    Khaa    Lijiay

Khushnumaa    Cheezen    Hen    Bazaar -e- Jahaan    Men    Be  Shumaar

Aik     Naqd-e- Dil    Say    Ya    Rab    Mol    Kaya    Kaya   Lijiay

Kushta    Aakhir    Aatish-e- Furqat    Say    Hona    Hay   Mujhay

Aor    Chanday    Soorat -e- Semaab    Tarrpa    Lijiay

Fasl-e- Gull    K    Aatay   Hi     AKBAR    Huay    Behosh   Aap

Kholiay    Aankhon   Ko    Sahib     Jaam -e- Sehba    Lijiay

Poet: Akbar   Allahabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -