انہیں نگاہ ہے اپنے جمال ہی کی طرف  | اکبر الہٰ آبادی |

انہیں نگاہ ہے اپنے جمال ہی کی طرف  | اکبر الہٰ آبادی |
انہیں نگاہ ہے اپنے جمال ہی کی طرف  | اکبر الہٰ آبادی |

  

انہیں نگاہ ہے اپنے جمال ہی کی طرف 

نظر اٹھا کے نہیں دیکھتے کسی کی طرف 

توجہ اپنی ہو کیا فن شاعری کی طرف 

نظر ہر ایک کی جاتی ہے عیب ہی کی طرف 

لکھا ہوا ہے جو رونا مرے مقدر میں 

خیال تک نہیں جاتا کبھی ہنسی کی طرف 

تمہارا سایہ بھی جو لوگ دیکھ لیتے ہیں 

وہ آنکھ اٹھا کے نہیں دیکھتے پری کی طرف 

بلا میں پھنستا ہے دل مفت جان جاتی ہے 

خدا کسی کو نہ لے جائے اس گلی کی طرف 

کبھی جو ہوتی ہے تکرار غیر سے ہم سے 

تو دل سے ہوتے ہو در پردہ تم اسی کی طرف 

نگاہ پڑتی ہے ان پر تمام محفل کی 

وہ آنکھ اٹھا کے نہیں دیکھتے کسی کی طرف 

نگاہ اس بت خود بیں کی ہے مرے دل پر 

نہ آئنہ کی طرف ہے نہ آرسی کی طرف 

قبول کیجیئے للہ تحفۂ دل کو 

نظر نہ کیجیئے اس کی شکستگی کی طرف 

یہی نظر ہے جو اب قاتل زمانہ ہوئی 

یہی نظر ہے کہ اٹھتی نہ تھی کسی کی طرف 

غریب خانہ میں للٰلہ دو گھڑی بیٹھو 

بہت دنوں میں تم آئے ہو اس گلی کی طرف 

ذرا سی دیر ہی ہو جائے گی تو کیا ہوگا 

گھڑی گھڑی نہ اٹھاؤ نظر گھڑی کی طرف 

جو گھر میں پوچھے کوئی خوف کیا ہے کہہ دینا 

چلے گئے تھے ٹہلتے ہوئے کسی کی طرف 

ہزار جلوۂ حسن بتاں ہو اے اکبرؔ 

تم اپنا دھیان لگائے رہو اسی کی طرف 

شاعر: اکبر الہٰ آبادی

(کلیات اکبر الہٰ آبادی،حصہ اول )

Unhen    Nigaah    Hay   Apnay   Jamaal    Hi    Ki   Taraf

Nazar   Utha     K    Nahen    Dekhtay    Kisi     Ki    Taraf

  Tawajja    Apni    Ho    Kaya    Fan-e-  Shaayri     Ki   Taraf

Nazar    Har    Kisi    Ki     Jaati    Hay   Aib    Hi   Ki  Taraf

Likha    Hua    Hay    Jo    Rona    Miray    Muqaddar   Men

Kayaal    Tak    Nahen    Jaata     Kabhi    Hansi     Ki   Taraf

Tunhaara     Saaya    Bhi    Jo    Log    Dekh    Laitay   Hen

Wo    Aankh    Utha    Kar    Nahen    Dekhtay    Pari   Ki   Taraf

Balaa   Men    Phansta    Hay    Dil    Muft    Jaan    Jaati    Hay

Khuda    Kisi    Ko    Na    Lay    Jaaey    Uss    Gali    Ki   Taraf

Kabhi    Jo    Hoti    Hay    Takraar     Ghair     Say    Ham   Ko

To   Dil    Say    Hotay    Ho   Dar    Parda    Tum    usi   Ki  Taraf

Nigaah    Parrti    Hay   Un    Par   Tamaam    Mehfill   Ki

Wo    Aankh    Utha    Kar    Nahen    Dekhtay    Kisi    Ki  Taraf

Nigaah    Uss    But-e- Khud    Been    Ki    Hay    Miray   Dil  Par

Na    Aaina   Ki    Taraf     Hay   Na    Aarsi    Ki   Taraf

Qubool     Kijiay    Lillah    Tohfa -e- Dil   Ko

Nazar    Na    Kijiay    Iss    Ki    Shakistagi    Ki   Taraf

Yahi    Nazar    Hay  Jo    Ab   Qaatil -e- Zamana   Hay

Yahi    Nazar    Thi    Keh    Jo    Na    Uthti    Thi    Kisis    Ki  Taraf

Ghareeb      Khaana    Men    Lillah   Do    Gharrir   Betho

Bahut     Dino    Men   Tum    Aaey    Ho    Iss    Gali    Ki   Taraf

Zara     Si    Dair    Hi    Ho    Jaaey    Gi    To   Kaya   Ho   Ga

Gahrri    Gharri    Na    Uthaao    Nazar    Gharri    Ki   Taraf

Jo    Ghar    Men     Poochay   Koi    Khaof    Kaya    Hay    Keh  Dena

Chalay    Gaey    Thay    Tahaltay    Huay    Kisi    Ki   Taraf

Hazaar    Jalwa -e- Husn-e- Butaan    Ho    Ay   AKBAR

Tum    Apna    Dhayaan    Lagaaey    Raho    Usi    Ki   Taraf

Poet: Akbar Allahabadi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -