گندا نالہ بیماریاں پھیلانے لگا اہل علاقہ ووٹ ڈالنے سے انکار

گندا نالہ بیماریاں پھیلانے لگا اہل علاقہ ووٹ ڈالنے سے انکار
گندا نالہ بیماریاں پھیلانے لگا اہل علاقہ ووٹ ڈالنے سے انکار

  

لاہور(چوہدری حسنین/الیکشن سیل)UC129 ناقص سیوریج ،پینے کاگندہ پانی ،گیس اور بجلی غائب،نالے کی تعمیرکاپرجیکٹ التواءکاشکاراہلِ علاقہ خطرناک بیماریوں میں مبتلاہونے لگے،عوام کا ووٹ ڈالنے سے انکار، اہلِ علاقہ کاکہناتھاکہ یونین کونسل 129میں گندہ نالہ جوکہ میاں شہباز شریف خادمِ اعلیٰ پنجاب کے گھرسے آدھے کلومیٹرکے فاصلے پرہے اس کی تعمیرکاپروجیکٹ 2سال قبل شروع کیاگیا تھا لیکن ابھی تک یہ پروجیکٹ مکمل نہ ہوسکا گندے نالے کی وجہ سے اہلِ علاقہ خادمِ اعلیٰ پنجاب اور ایم پی اے رمضان صدیق بھٹی کے خلاف پھٹ پڑے ،رہائشی کرم الٰہی کاکہناتھاکہ گندے نالے کی وجہ سے علاقہ میں خطرناک بیماریاں پھیل رہی ہیں جس کی وجہ سے آئے دن لوگ بیماریوں کی وجہ سے اپنی زندگی سے ہاتھ دورہے ہیں ،لیکن خادمِ اعلیٰ پنجاب کو کوئی خیال نہیں ،منیراحمد کاکہناتھاکہ گندے نالے کی تعمیرخادمِ اعلیٰ کی وجہ سے ہی التواءکاشکارہے ان کاگھر یہاںسے 1/2کلومیٹرکے فاصلے پر ہے اگروہاں پرذراسابھی پانی کھڑاہوجاتاہے تو وہ پمپوں کے ذریعے نکال دیاجاتاہے لیکن اس گندے نالے کاکسی کوبھی خیال نہیں جس کی وجہ سے غریب لوگوں کاجینامحال ہوگیا ہے 80فیصدلوگ مختلف قسم کی بیماریوںمثلاًہیپاٹائیٹس،ڈینگی وائرس اورملیریاجیسی حلق بیماریوںمیںمبتلاہیں ،عرفان کاکہناتھاکہ رمضان بھٹی جو اس علاقہ کاایم پی اے رہ چکاہے پچھلے پانچ سالوں میںاس نے ہمارے علاقہ میں قدم نہیں رکھااب ووٹ مانگنے آگیا ہے اس نے کوئی کام نہیں کیاہم اس کو کبھی بھی ووٹ نہیں دیں گے چاہے وہ جس مرضی پارٹی سے ہو،عمران کاکہناتھاکہ ایک مہینے سے ہمارے محلہ (ایک میناروالی مسجد)میں پینے کاپانی نہیں آرہااگرآتاہے تو وہ بھی پیلے رنگ کاہوتاہے جو پینے توکیادیکھنے کے قابل بھی نہیں ہوتا ،ناقص اور پراناسیوریج ہونے کی وجہ سے پانی کی لائنوں میں گندا پانی شامل ہوجاتاہے جس کی وجہ سے علاقہ کے لوگ خطرناک بیماریوں میںمبتلاہوجاتے ہیں یہ جو ووٹ مانگنے آجاتے ہیں ان کو بندہ پوچھے کہ کونسا ایساکام کیاہے کہ ہم انہیں ووت دیں ،اس سے تو بہترہے کہ ہم ووٹ کاسٹ ہی نہ کریںرکھاکاکہناتھاکہ میں یہاں پرسال سے رہائش پذیرہوںاورنالے کے اوپر میرافروٹ کاکھوکھاتھا پہلے یہ نالہ برساتی نالہ ہواکرتاتھا،اور اس میں صاف پانی آتاتھا،لیکن جوں جوں وقت گزرتاگیا نالہ چوڑاہوتاگیا پھرواساوالوں نے آدھے لاہورکے گٹروںکاگنداپانی اس میںڈال دیاجوکہ نالے کے اوپر موجود تمام آبادیوں کے لیےءمضرِ صحت ہے کیونکہ اس میں فاسفورس پیداہوتی ہے جوکہ الیکٹرونکس کی چیزوں کونقصان پہنچاتی ہے اس کاکہناتھاکہ میراکھوکھانالے کے اوپر ہوتاتھاکہ نالے کے اوپرگرلزہائی سکول ہے جس میں ہزاروں طالبات علم حاصل کرنے کے لئے آتی ہیںجن کو نالے کی گندگی اور بدبوکی وجہ سے پڑھنے میں بہت مشکلات کاسامناہے نالے کی بدبوکی وجہ سے ان کوپڑھنے میں شدیدمشکلات کاسامناکرناپرتاہے اگرہم اپنی آنے والی نسل کو ایسے تعلیمی حالات مہیا کریں گے تو ہماراملک آئندہ کے لئے گندگی اور بدبو کے لئے ہی مخصوص ہوکر رہ جائے گا۔

مزید :

الیکشن ۲۰۱۳ -