پی ایس کیو سی اے کا کریک ڈاؤن‘ 15برانڈز کی چائے پر پابندی

پی ایس کیو سی اے کا کریک ڈاؤن‘ 15برانڈز کی چائے پر پابندی

اسلام آباد (اے پی پی)پاکستان سٹینڈرڈ اینڈ کوالٹی کنٹرول اتھارٹی (پی ایس کیو سی اے) نے غیر معیاری چائے بنانے والے مینو فیکچررکیخلاف کریک ڈاؤن کرتے ہوئے 15مختلف برانڈزکی چائے کی فروخت اورسٹاک پر پابندی عائد کر دی جبکہ پانچ پیداواری یونٹس کو سربمہر کر دیا گیا۔ بدھ کو پی ایس کیو سی اے کے ڈائریکٹر محمد یسین اختر اور ریجنل انچارج عبدالغفار خان نیازی نے ڈائریکٹر جنرل پی ایس کیو سی اے محمد خالد صدیقی کی ہدایت پر عملدرآمد کرتے ہوئے پی ایس کیو سی اے ایکٹ کے تحت بھکر ،میانوالی اور دریا خان میں چائے کے پندرہ مختلف برانڈ کی فروخت اور سٹاک پر پابندی عائد کردی۔ان میں عوامی چائے،مہک چائے سپر مہک چائے،شیر مارکہ چائے ،سندر چائے،تلوار پشاور مکسچر چائے،کرسٹل چائے،پارٹنر چائے،انمول چائے،انعامی چائے ہارون چائے،نایاب چائے، الطیبات چائے،لوکل چائے ،خان چائے اور ڈائمنڈ چائے شامل ہیں۔علاوہ ازیں چائے کے پانچ پیداواری یونٹس کو سربمہر کر دیا گیا۔جن میں عوامی چائے،مہک چائے،شیر مارکہ چائے ،سندر چائے،تلوار پشاور مکسچر چائے شامل ہیں۔

ایسی تمام خوردنی اشیاء جو کہ حکومت پاکستان کی جانب سے اشیاء ضروریہ کی فہرست میں شامل ہیں،انکا معیار پاکستان سٹینڈرڈ کے مطابق پی ایس کیو سی اے کا لائسنس یافتہ اور ہر لائسنس یافتہ پروڈکٹ کے اوپر پی ایس کیو سی اے لائسنس نمبر اور پاکستان سٹینڈرڈ کا لوگو پرنٹ ہونا ضروری ہے ۔خلاف ورزی کرنے والے کو پی ایس کیو سی اے ایکٹ کے تحت کم از کم پچاس ہزار روپے جرمانی اور دو سال قیدبامشقت کی سزا ہو سکتی ہے۔

مزید : کامرس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...