حکمران جمہوریت کیلئے نقصان دہ ،پاناما کیس فیصلہ سے زیادہ توقعات نہیں:زرداری

حکمران جمہوریت کیلئے نقصان دہ ،پاناما کیس فیصلہ سے زیادہ توقعات نہیں:زرداری

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سابق صدر اور کو چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی آصف علی زرداری نے کہا ہے انہیں پانامہ کے فیصلے سے زیادہ توقعات نہیں ہیں تاہم پانامہ فیصلے کے بعد ہی وہ اس پر ردعمل دیں گے۔ سابق صدر زرداری کا مزید کہنا تھا کہ تمام اپوزیشن جماعتوں کو ساتھ ملا کر لائحہ عمل طے کیا جائے گا ۔ نوازشریف نے ہمارے ساتھ بہت زیادہ بددیانتی کی اور اب انہیں ہماری ضرورت بھی پڑی توفون نہیں اٹھاؤں گا۔گزشتہ روز نجی ٹی وی کو خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے آصف زرداری نے کہاہمیں پاناما کیس کے فیصلے کا بڑی شدت سے انتظار ہے، نوازشریف کو کسی فیصلے کو ماننے کی عادت نہیں اسلئے معلوم نہیں کہ وزیراعظم پاناما کیس فیصلے کے بعد کیا کریں گے تاہم پاناما فیصلے پر احتجاج جمہوریت کیلئے اچھا نہیں ہوگا جبکہ فیصلہ نوازشریف کیخلاف آیا تو مان لینا بہتر ہوگا کیونکہ انکے پاس بہت لوگ ہیں جن میں سے کسی کو بھی وزیراعظم بناسکتے ہیں۔ حکمران جمہوریت کو نقصان پہنچا رہے ہیں اور وہ شہنشاہ بن کر پارلیمنٹ چلا رہے ہیں جبکہ حکومت کے خاتمے تک پورے پاکستان میں تحریک چلائیں گے۔14ء میں حکومت کوسیاسی شہید نہیں ہونے دیا لیکن اب نااہل حکمرانوں سے نجات حاصل کرنا ہی ہوگی جبکہ حکومت بھی قبل ازوقت الیکشن پرجاسکتی ہے اور ہم بھی جاسکتے ہیں۔ وفاق اورصوبے کی لڑائی بات چیت کے ذریعے ہی حل ہوسکتی ہے لیکن وفاق تنازعات کو سیاسی معاملہ بنانے کی کوشش کررہا ہے۔ نواز حکومت سستا تیل ملنے کے باوجود بجلی سستی نہیں کررہی، اب توکسان کے پاس پانی ہے نہ بجلی، حکمران روڈ بنواسکتے ہیں اور کمیشن لے سکتے اس سے زیادہ کچھ نہیں کرسکتے جبکہ میں نوازشریف سے بہتر مینجمنٹ کرسکتا ہوں۔دریں اثناء پیپلزپارٹی سے متعلق ذرائع کا کہنا ہے کہ اسلام آباد میں اجلاس میں پانامالیکس کے متوقع فیصلے اوراس کے بعدکے لائحہ عمل پر مشاورت کی جارہی ہے،اجلاس میں پیپلز پارٹی کاپاناما فیصلے کے بعداپوزیشن کا گرینڈ الائنس بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔

مزید : ملتان صفحہ اول