’سعودی عرب نے یہ کام کروانے کیلئے امریکہ کو 200 ارب ڈالر ادا کئے‘ تہلکہ خیز دعویٰ منظر عام پر آگیا

’سعودی عرب نے یہ کام کروانے کیلئے امریکہ کو 200 ارب ڈالر ادا کئے‘ تہلکہ خیز ...
’سعودی عرب نے یہ کام کروانے کیلئے امریکہ کو 200 ارب ڈالر ادا کئے‘ تہلکہ خیز دعویٰ منظر عام پر آگیا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ریاض (مانیٹرنگ ڈیسک)یمن کی متنازعہ جنگ میں امریکہ کی شمولیت پر اس سے پہلے بھی کئی سوالات اٹھائے جارہے تھے مگر مغربی میڈیا میں سامنے آنے والی ایک نئی رپورٹ نے انتہائی متنازعہ دعوٰی کر کے ایک بڑا ہنگامہ کھڑا کردیا ہے۔

امریکن ہیرلڈ ٹریبیون کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سعودی عرب نے امریکہ کو 200 ارب ڈالر (تقریباً 200 کھرب پاکستانی روپے) دے کر یمن میں جنگ لڑنے پر تیار کیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق صالح القرشی نے ایف این اے سے بات کرتے ہوئے بتایا ”واشنگٹن کی جانب سے سعودی عرب کے دفاع کی مد میں مزید رقم کا مطالبہ کیا گیا تھا اور سعودی عرب نے حال ہی میں امریکہ کو یمن کی جنگ کی مد میں 200 ارب ڈالر کی ادائیگی کی ہے۔ یہ اس خطیر رقم کے علاوہ ہے جو سعودی عرب اپنے دفاع کے لئے امریکہ کو ادا کرتا ہے۔“

امریکہ کی مسلمان دشمنی کے تمام ریکارڈ ٹوٹ گئے، مسجد پر حملہ کرکے نمازیوں کو نشانہ بناڈالا

القرشی کے مطابق گزشتہ سال سعودی عرب کے سابق انٹیلی جنس چیف ترکی الفیصل نے انکشاف کیا کہ مملکت نے امریکی معیشت کو سہارا دینے کیلئے کم منافع والے امریکی بانڈ خریدے۔ گزشتہ ہفتے مغربی میڈیا میں یہ رپورٹ بھی سامنے آئی کہ شام میں امریکہ کے تازہ ترین میزائل حملے کا خرچ بھی سعودی عرب نے برداشت کیا۔ یہ حملہ حمس صوبے میں الشائراط ائیربیس پر کیا گیا تھا۔

ایک سفارتی ذرائع کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی کامیابی کے بعد سعودی حکام زیادہ پرامید نہیں تھے لیکن انہوں نے دولت کے ذریعے انہیں بہلانے کا فیصلہ کیا۔ یہ دعویٰ بھی کیا گیا ہے کہ سعودی عرب شائراط ائیربیس جیسے مزید حملوں میں دلچسپی رکھتا ہے، جس کے لئے امریکہ کو مزید بھاری بھرکم ادائیگیاں کی جائیں گی۔

مزید : عرب دنیا