انتہا پسند مودی سرکار کرونا وائر کی آڑ میں مسلم کمیونٹی کو نشانہ بنا رہی ہے: عمران خان، بھارتی حکومت مسلمانوں کیخلاف نفرت انگیز مہم بند کرے: او آئی سی

        انتہا پسند مودی سرکار کرونا وائر کی آڑ میں مسلم کمیونٹی کو نشانہ بنا ...

  

جدہ(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) اسلامی تعاون تنظیم کے کمیشن برائے انسانی حقوق نے بھارت میں کرونا وائرس کی وبا کے پھیلاؤکے لیے مسلمانوں کو مورد الزام ٹھہرانے اور نفرت انگیزی کا نشانہ بنانے کی مذمت کی ہے۔او آئی سی کے انڈی پینڈنٹ پرمیننٹ ہیومن رائٹس کمیشن نے اپنے ٹوئٹ میں کہا کہ بھارتی حکومت بین الاقوامی قوانین کے مطابق مسلم اقلیت کے حقوق کا تحفظ اور ملک میں بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا کی روک تھام کے لیے اقدامات کرے۔ٹوئٹ میں کہا گیا ہے کہ او آئی سی کا کمیشن برائے انسانی حقوق بھارت میں مسلمانوں کو کورونا وائرس کے پھیلاوکا ذمے دار قرار دینے اور ان کے خلاف نفرت انگیزی کی شدید مذمت کرتا ہے۔ بھارتی میڈیا میں مسلمانوں کی منفی تصویر پیش کرنے اور انھیں امتیازی سلوک اور تشدد کا ہدف بنانے پر تشویش ہے۔واضح رہے کہ بھارتی مصنفہ، صحافی اور سماجی کارکن ارون دتی رائے انکشاف کرچکی ہیں کہ بھارتی حکومت کورونا وائرس کی وبا کے پھیلاؤکا ذمہ دار مسلمانوں کو ٹھہرا کر ہندوؤں کے جذبات کو اکسا رہی ہے جس سے حالات ایک بار پھر مسلمانوں کی نسل کشی کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ دوسری جانب بھارت میں کورونا وبا کی ابتدا ہی سے تبلغی جماعت کو نشانہ بنانے کا سلسلہ جاری ہے۔۔دوسری طرف شوپیان کے رہنے والے دو کشمیری کرونا کے باعث جاں بحق ہو گئے ان کی لاشیں سرینگر کے ہسپتال میں کرونا کی جانچ کے بعد شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ پہنچائی گئیں جہاں ان کی تدفین عمل میں لائی گئی۔یہ قدم وادی میں کووڈ 19 کے پھیلاؤکے پیش نظرکیاگیاہے۔کشمیر میڈیاسروس کے مطابق بارہمولہ سے وابستہ کوروناوائرس کا70 سالہ بزرگ مریض ہسپتال میں انتقال کرگیاجس کے بعد مقبوضہ کشمیر میں کورونا سے اموات پانچ ہو گئی ہیں۔کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد 346تک پہنچ گئی ہے۔مقبوضہ کشمیر میں کرونا ریڈ زون علاقوں کی تعدادبڑھ کو 80ہوگئی ہے۔دوسری جانب بھارتی پنچاب کے ضلع پٹھانکوٹ کے مختلف قرنطینہ مراکز میں قرنطینہ کی مدت مکمل ہونے کے باوجودگھروں کو واپس نہ بھیجنے پر لگ بھک بارہ سو کشمیری محنت کشوں نے مقبوضہ علاقے میں اپنے گھروں کو واپسی کیلئے بھوک ہڑتال شروع کر دی ہے۔حریت تنظیموں اور حریت رہنماؤں نے بھارتی فوج کے محاصرے اور تلاشی کی بڑھتی کارروائیوں پرتشویش اوروبا کے پیش نظر جیلوں میں غیرقانونی طور پر نظر بند کشمیریوں کی رہائی کامطالبہ کیا۔

او آئی سی

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بھارت کی حکومت کرونا وبا کی آڑ میں مسلمانوں کو نشانہ بنا رہی ہے۔سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹویٹر پر جاری بیان میں وزیراعظم عمران خان نے دنیا کی توجہ بھارت کے ظالمانہ اقدام کی طرف دلاتے ہوئے کہا کہ مودی سرکار کی پرتشدد کارروائیوں سے ہزاروں مسلمان بھوک کا شکار ہیں۔وزیراعظم نے اپنی ٹویٹ میں لکھا کہ مودی حکومت کا اقدام جرمنی میں نازیوں کا یہودیوں کیخلاف جیسا ہے۔ موجودہ اقدامات مودی سرکار کی ہندوتوا اور متعصبانہ سوچ کا ثبوت ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ بھارتی حکومت کورونا وائرس کے خلاف ناقص پالیسی اپنانے پر عوامی ردعمل سے بچنے کے لیے منظم انداز میں جان بوجھ کر مسلمانوں کو وائرس کے پھیلاؤ کا ذمے دار قرار دے کر نشانہ بنا رہی ہے۔یاد رہے کہ بھارت میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کا ذمے دار گزشتہ ماہ منعقدہ تبلیغی اجتماع کو قرار دیا جا رہا ہے اور بھارت میں اس سلسلے میں باقاعدہ مہم شروع کردی گئی ہے۔بھارت کے اسی رویے پر وزیر اعظم عمران خان نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بھارت میں کورونا وائرس کے پیش نظر ملک گیر لاک ڈاؤن کی وجہ سے ہزاروں لوگ محصور ہو گئے ہیں اور بھوکے ہیں۔دریں سیلولر کمپنی جاز موبی لنک کے چیف ایگزیکٹو آفیسر نے وزیر اعظم کرونا ریلیف فنڈ میں 5 کروڑ روپے کا چیک دے دیا۔ اتوار کو وزیر اعظم عمران خان سے معاون خصوصی زلفی بخاری اور جاز کے سی ای او عامر ابراہیم نے خصوصی ملاقات کی۔ملاقات میں سی ای او جاز نے وزیر اعظم کو کرونا کی وبا کے سلسلے میں قائم ریلیف فنڈ کے لیے 5 کروڑ روپے کا چیک پیش کیا، اس موقع پر وزیر اعظم نے کہا کرونا ریلیف فنڈ میں بڑھ چڑھ کر حصہ ڈالنے والے تعریف کے مستحق ہیں۔ انھوں نے معاون خصوصی زلفی بخاری کی خصوصی کوششوں کو بھی سراہا۔دریں اثنا، کمپنی نے صارفین کی جانب سے فنڈز میں حصہ ڈالنے کے لیے طریقہ کار کا بھی اعلان کر دیا، جس کے مطابق صارفین گھر بیٹھے 6677 پر پیغام بھیج کر 20 روپے عطیہ کر سکیں گے۔ مجموعی طور پر کمپنی کی جانب سے 20 کروڑ روپے کا ریلیف پیکج دیا گیا ہے، وزیر اعظم عمران خان نے کمپنی کے سی ای او اور ملازمین کی جانب سے کرونا ریلیف فنڈ میں عطیہ دینے کے عمل کو سراہا اور ان کا شکریہ ادا کیا۔

عمران خان

مزید :

صفحہ اول -