عوامی نمائندے غائب‘جام پور‘راجن پور مسلسل نظر انداز‘ عوام کو رگڑا

  عوامی نمائندے غائب‘جام پور‘راجن پور مسلسل نظر انداز‘ عوام کو رگڑا

  

جام پور (نامہ نگار ) ضلع راجن پور سے تعلق رکھنے والے سیاستدان صدارت کے منصب سے لے کرکے ڈپٹی سپیکر کے عہدے تک پہنچنے کے باجود عوام کے مسائل کے (بقیہ نمبر11صفحہ6پر)

حل کرنے میں ناکام رہے۔ بائیس سال گزرجانے کے باوجود جام پور اور راجن پور کو سوئی گیس کی فراہمی نہ ہو سکی۔ ہزاروں نوجوان ڈگریاں لیے دھکے کھا رہے ہیں۔سابق صدر فاروق احمد لغاری۔ نگراں وزیر اعظم میر بلغ شیر مزاری سے لے کرکے چیف وہب نصر اللہ دریشک۔ ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی سردار دوست محمد مزاری تک کے عہدوں کو اعزاز راجن پور کے منتخب سیاستدانوں کو نصیب ہو ا لیکن بدقسمتی سے راجن پور کے مسائل جوں کے توں ہیں۔ جام پور میں 1998میں اس وقت کے نگراں وفاقی وزیر پیٹرولیم جاوید جبار نے 38کروڑ روپے کی لاگت سے جام پور میں سوئی گیس کے پائپ بچھانے کے منصوبے کا افتتاح کیا۔ پائپ بچھانے کے بعد تاحال سوئی گیس جام پور کی عوام کو نہ مل سکی۔ بچھائے جانے والے پائپ اپنی عمر پوری کرکے ختم ہو چکے ہیں۔ اسی طرح راجن پور کے لوگ بھی سوئی گیس جیسی سہولت سے محروم ہیں۔ تعلیمی لحاظ سے راجن پور میں کوئی یونیورسٹی نہ ہے۔ ہیلتھ میں بیمارشخص کو ملتان یا رحیم یار خان لے جانا پڑتا ہے۔ انڈس ہائی وے ون وے نہ ہو نے سے ہر سال تین ہزار لوگ اس روڈ پر حادثات کینذر جاتے ہیں۔ بے روزگارنوجوان ڈگریاں لیے روز گار کی تلاش میں مارے مارے پھر رہے ہیں۔ شہریوں کلیم اللہ۔ احمد بخش۔ اعجاز احمد نے کہا کہ الیکشن کے موقع پر عوام سبز باغ دکھا کرکے سیاستدان ووٹ کی پرچی حاصل کرنے کے بعد واپس نہیں آ تے۔ کب ہمارے نصیب جاگیں گے۔؟ انہوں نے وزیر اعظم پاکستان عمران خان۔ وزیر اعلی پنجاب سے اپنی حکومت کے ویژن پر عمل کرتے ہوئے پسماندہ علاقوں کی ترقی اور عوامی مسائل کوحل کرنے کا مطالبہ کیاہے۔

رگڑا

مزید :

ملتان صفحہ آخر -