شوکت خانم ہسپتال کو حکومت کی طرف سے کورونا ٹیسٹ کٹس دیئے جانے پرتنقید لیکن دراصل یہ کیوں فراہم کی گئی تھیں؟ بالآخر حکومتی موقف بھی سامنے آگیا

شوکت خانم ہسپتال کو حکومت کی طرف سے کورونا ٹیسٹ کٹس دیئے جانے پرتنقید لیکن ...
شوکت خانم ہسپتال کو حکومت کی طرف سے کورونا ٹیسٹ کٹس دیئے جانے پرتنقید لیکن دراصل یہ کیوں فراہم کی گئی تھیں؟ بالآخر حکومتی موقف بھی سامنے آگیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) چین کی طرف سے ملنے والی کورونا ٹیسٹ کٹس شوکت خانم ہسپتال کو بھی فراہم کی گئی تھیں جس پر کئی حلقوں کی طرف سے تنقید ہوتی رہی اور یہ بھی دعویٰ کیا گیا کہ عطیہ میں ملنے والی ٹیسٹ کٹوں سے نقدرقم لے کر ٹیسٹ کیے جارہے ہیں لیکن دراصل شوکت خانم کو یہ کٹس کیوں فراہم کی گئی تھیں، اس پر حکومتی موقف سامنے آگیا۔

پی ٹی آئی کے رہنما ڈاکٹر شہباز گل نے ٹوئٹر پر وضاحت کی کہ  جتنی بھی حکومتی کٹس شوکت خانم کو ملیں ان پر فری ٹیسٹ کئیے گئے اور اس وقت پنجاب میں صرف 2 لیبز کے بعد ٹیسٹ کی سہولت ہونے کی وجہ سے صوبے میں استعداد کار بڑھانے کی خاطر شوکت خانم کو بھی کٹس فراہم کی گئیں۔

انہوں نے  لکھا"شوکت خانم کینسرہسپتال کے بارے جھوٹا پراپیگنڈا کہ حکومتی فری کٹس پر پیسے لے کر ٹیسٹ کئے۔شوکت خانم نے تقریبا 3500 ٹیسٹ کئیے جس میں سے 2900 سرکاری کٹس پر فری کئے۔پلس 650 ٹیسٹ جن کی لاگت 45 لاکھ اپنے بجٹ سے کئے۔حکومت نے کٹس دیں کیونکہ اس وقت پنجاب میں صرف دو لیب یہ ٹیسٹ کر سکتی تھیں"۔

انہوں نے ٹوئٹر پر لکھا " جتنی بھی حکومتی کٹس شوکت خانم کو ملیں ان پر فری ٹیسٹ کئیے گئے،اس کے علاوہ 45 لاکھ کہ ٹیسٹ ہسپتال نے اپنے بجٹ سے کئے"۔

انہوں نے وضاحت کیساتھ ہی اچھی خبر سناتے ہوئے لکھا "اچھی خبر: انشاللہ 30 اپریل سے پاکستان میں روزانہ ایک لاکھ N95 ماسک بننا شروع ہو جائیں گے۔ جو کہ نا صرف پاکستان کی اپنی ضرورت پوری کریں گے بلکہ ایکسپورٹ بھی کئیے جائیں گے۔ کرونا کہ کرائسس میں پاکستانی قوم کا رسپانس ایک بہترین رسپانس رہا جو کہ ہر اعدادو شمار سے ثابت ہوتا ہے"۔

ان کاکہناتھاکہ "قیمت تقریبا 300 سے 400 سو روپے تک ہوگی۔ جب پروڈکشن بڑھ جائے گی تو اور سستے ہو جائیں گے"۔

مزید :

قومی -کورونا وائرس -