پارکنگ سٹینڈوں پر پرچی فیس کی آڑ میں بھتہ وصولی جاری

پارکنگ سٹینڈوں پر پرچی فیس کی آڑ میں بھتہ وصولی جاری

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

                     لاہور(جاوید اقبال) لاہور پارکنگ کمپنی اور ضلعی انتظامیہ صوبائی دارالحکومت میں واقع پارکنگ سٹینڈوں پر اوور چارجنگ ختم کرانے میں ناکام ہو گئی ہے شہر کے 90فیصد پارکنگسٹینڈز کی نگرانی لاہور پارکنگ کمپنی کے حوالے کر دی گئی ہے مگر سب سے زیادہ اوور چارجنگ بھی کمپنی کے زیر نگرانی پارکنگ سٹینڈوں پر ہیہو رہی ہے جبکہ دوسری طرف شہر کے سینکڑوں مقامات پر پارکنگ فیس کے نام پر پرچی ٹیم رائج ہے جن سے بھتہ مافیا پارکنگ فیس کی آڑ میں بھتہ وصول کر رہا ہے پارکنگ کمپنی کے عملے اور ٹھیکیداروں نے شہر میں فی گھنٹہ پارکنگ کا نظام متعارف کرایا جس کی فیس 10سے 20روپے فی کار پارکنگ فیس مقرر کی گئی مگر عملہ 30سے 50روپے فی گھنٹہ پارکنگ فیس گاڑیوں والوں سے وصول کر کے ان کی جیبیں کاٹ رہا ہے تکرارکرنے والے گاڑیوں کے مالکان کو ٹھیکیداروں کے کارندے تشدد کا نشانہ بتاتے ہیں بتایا گیا ہے کہ لاہور ٹرانسپورٹ کمپنی شہر کے پارکنگ سٹینڈوں سے اوور چارجنگ کے خاتمے کے لئے بنائی گئی تھی مگر اس وقت اوور چارجنگ عروج پر پہنچ چکی ہے سب سے زیادہ اوور چارجنگ لاہور ریلوے اسٹیشن کے سامنے اعظم کلاتھ مارکیٹ سے یکی گیٹ اور شیرانوالہ گیٹ کے باہر بنائے گئے پارکنگ سٹینڈ پر ہو رہی ہے جہاں کار کی پارکنگ کا 100روپے سے 150روپے وصول کیا جا رہا ہے ریلوے اسٹیشن کے سامنے ٹھیکیدار کے کارندے 100فیصد اوور چارجنگ کر رہے ہیں سرکلر روڈ پر بھی اوور چارجنگ عروج پر ہے، شہر کی تفریح مقامات پر چڑیا گھر، ریس کورس، ماڈل ٹاﺅن پارک، باغ جناح میں آنے والوں کے فی کار 70سے 100روپے تک فیس وصول کی جا رہی ہے شہر کے 3سو مقامات پر چنگ چی، رکشہ والوں کے کمپنی کے کارندے زبردستی 20روپے فی پھیرا فیس وصول کرتے ہیں۔ جبکہ ضلعی انتظامیہ کے زیر قبضہ سٹینڈوںپر پارکنگ فیس کے نام پر لوٹ مار ہو رہی ہے اس حوالے سے ڈی سی او لاہور کیپٹن عثمان سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ اوور چارجنگ کی روک تھام کی ذمہ لاہور پارکنگ کمپنی ہے اوور چارجنگ ہو رہی ہے تو کمپنی کی انتظامیہ سے جواب طلب کریں گے اس حوالے سے کمپنی ترجمان کا کہنا ہے کہ اوور چارجنگ کا خاتمہ کر دیا گیا ہے چند مقامات پر ضلعی انتظامیہ کے زیر نگرانی لوٹ مار ہو رہی ہے۔