حکومتی کمیٹی سے براہ راست مذاکرات نہیں کروں گا: طاہر القادری

حکومتی کمیٹی سے براہ راست مذاکرات نہیں کروں گا: طاہر القادری
 حکومتی کمیٹی سے براہ راست مذاکرات نہیں کروں گا: طاہر القادری

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) قائد پاکستان عوامی تحریک علامہ طاہر لقادری نے کہا ہے کہ وہ کسی صورت حکومتی کمیٹی کے ساتھ براہ راست مذاکرات نہیں کریں گے ۔ تمام مطالبات مذاکراتی کمیٹیوں کے سامنے رکھیں گے اور یہ بات چیت کے دوران ہی پتہ چلے گا کہ ہم کتنی لچک دکھا سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے تمام مطالبات جائز اور آئین کی حدود میں ہیں ،وزیر اعظم نواز شریف اوروزیر اعلی شہباز شریف کو استعفیٰ دے کر سانحہ ماڈل ٹاون کا حساب دینا ہو گا۔ انہوں نے سیاسی معاملات میں کسی تیسرے فریق کی مداخلت کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ پاک فوج ہمیشہ سے ہی پاکستان کے مفادات کی محافظ رہی ہے اور یہ محض ان کا ردعمل ہی ہے۔ طاہر القادری نے کہا کہ وہ مذاکرات ضرور کرنے جا رہے ہیں تاہم یہ مذاکرات صرف اور صرف بامعنی ہونے چاہیئں۔ اس موقع پر جب ان سے پوچھا گیا کہ اگر شریف برادران میں سے کوئی ایک مستعفی ہو جائے تو کیا وہ دوسرے کو قبول کر لیں گے یا نہیں تو انہوں نے واضح طور پر کہا کہ ان دونوں بھائیوں کو ہی گھر جانا ہو گا۔

مزید :

قومی -اہم خبریں -