ہلال امتیاز ، ستارہ قائداعظم لائف اچیومنٹ ایوارڈ یافتہ ، انسانیت کی عظیم خادمہ ’’ڈاکٹر رتھ فاؤ ‘‘سرکاری اعزاز کیساتھ سپردخاک

ہلال امتیاز ، ستارہ قائداعظم لائف اچیومنٹ ایوارڈ یافتہ ، انسانیت کی عظیم ...

 کراچی(این این آئی،مانیٹرنگ ڈیسک)پاکستان میں جذام کے خاتمے کیلئے شب و روز محنت کرنے والی ڈاکٹر رتھ فاؤ کی تدفین سرکاری اعزازاور قومی پرچم کے ساتھ کراچی کے گورا قبرستان میں کردی گئی ہے۔تدفین میں صدرمملکت ممنون حسین، آرمی چیف جنرل قمرجاویدباجوہ، ائیرچیف مارشل سہیل امان ، وزیر خارجہ خواجہ آصف،گورنرسندھ محمدزبیر،وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ اور چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ احمد علی ایم شیخ ، کورکمانڈر کراچی سمیت متعدد اہم سیاسی اور سماجی شخصیات نے شرکت کی۔پاکستان کی مدر ٹریسا کہلائی جانے والی ڈاکٹر رتھ فاؤکی آخری رسومات ہفتہ کی صبح صدر میں واقع سینٹ پیٹرک کیتھیڈرل میں ادا کی گئیں۔ہزاروں چاہنے والوں کی آنکھیں اپنے مسیحا کے آخری دیدار پراشکبارتھیں۔آخری رسومات میں تینوں مسلح افواج کے دستوں کے علاوہ وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ، گورنر سندھ محمد زبیر، سعید غنی، ڈاکٹر ادیب رضوی، ڈاکٹر فاروق ستار، میئر کراچی وسیم اختر اور پاکستان میں جرمن سفیر سمیت دیگر شخصیات نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔اس موقع پر سینٹ پیٹرک کیتھیڈرل میں موجود افراد نے کھڑے ہوکر ڈاکٹررتھ فاؤ کو خراج عقیدت پیش کیا۔ان کے تابوت کو پاکستانی پرچم میں لپیٹا گیا ۔سینٹ پیٹرک کیتھیڈرل میں موجود افراد کو ڈاکٹر رتھ فاؤ کا آخری دیدار کرایا گیا۔پاک فوج کے دستے نے ڈاکٹر رتھ فاؤ کو آرٹلری گنز کی سلامی دی اور ان کے جسد خاکی کو سرکاری اعزاز کے ساتھ سینٹ پیٹرک کیتھڈرل چرچ پہنچایا گیا۔ میری ایڈی لیڈ لیپرسی سینٹر میں ان کے مریضوں ، ملنے والوں اور انگنت پرستاروں کو آخری دیدار کرایا گیا۔ڈاکٹر رتھ فاؤ کی آخری رسومات کے موقع پر سیکورٹی کے سخت انتظامات کیئے گئے تھے۔چرچ کے اطراف عمارتوں پر رینجرز اہلکار تعینات کیئے گئے تھے جبکہ چرچ میں خواتین اہلکاروں کو تعینات کیا گیا تھا۔سکیورٹی کیلئے واک تھرو گیٹ بھی نصب کئے گئے اور رسومات میں شرکت کیلئے سکیورٹی پاسز جاری کئے گئے تھے ۔ڈاکٹررتھ فاکی وصیت کے مطابق ان کی تدفین سرخ جوڑے میں کی گئی۔جذام یا کوڑھ کے مریضوں کا علاج کرنے والی ڈاکٹر رتھ فاؤ 10اگست کی رات کراچی میں چل بسی تھیں۔ ڈاکٹر رتھ فاؤ 9ستمبر1929کو جرمنی کے شہر لیپ زگ میں پیدا ہوئیں تھیں۔ ڈاکٹر رتھ فاؤ 1960میں پاکستان آئیں اور پھر جذام کے مریضوں کے لیے اپنی ساری زندگی وقف کردی تھی۔ وہ جذام کو مریضوں کو مفت سہولیات فراہم کرتی تھیں۔عالمی ادارہ صحت کی جانب سے 1996 میں پاکستان کو کوڑھ کے مرض پر قابو پالینے والے ممالک میں شامل کیا گیا۔ پاکستان کو یہ اعزاز دلانے میں ڈاکٹررتھ فاؤ نے سب سے اہم کردار اداکیا۔انسانیت کی اس عظیم خادمہ ڈاکٹر رتھ فاؤ کو1998 میں اعزازی پاکستانی شہریت دی گئی جبکہ انہیں ہلال امتیاز، ستارہ قائد اعظم ، ہلال پاکستان اورلائف اچیومنٹ ایوارڈ سے بھی نوازا گیا۔

ڈاکٹر رتھ فاؤ سپرد خاک

کراچی (آن لائن)وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ نے آنجہانی ڈاکٹر رتھ فا ؤکو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے سول ہسپتال کراچی کا نام 'ڈاکٹر رتھ فا ؤسول ہسپتال' رکھنے کا اعلان کردیا۔وزیراعلی ہاؤس سے جاری ہونے والے ایک اعلامئے کے مطابق مراد علی شاہ نے چیف سیکرٹری سندھ کو ہسپتال کا نام تبدیل کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کرنے کا حکم بھی دے دیا۔وزیراعلی سندھ کے مطابق ڈاکٹر رتھ فاؤ فخر سندھ اور فخر پاکستان تھیں۔پاکستان میں جذام/کوڑھ کے مریضوں کا علاج کرنے والی 'پاکستانی مدر ٹریسا' ڈاکٹر رتھ فاؤ10 اگست کو کراچی میں انتقال کرگئی تھیں۔

وزیر اعلیٰ سندھ

مزید : صفحہ اول