حکمرانوں نے قبلہ درست نہ کیا تو بحران کہرام میں بدل سکتا ہے: سراج الحق

حکمرانوں نے قبلہ درست نہ کیا تو بحران کہرام میں بدل سکتا ہے: سراج الحق

کوئٹہ(آن لائن)جماعت اسلامی کے امیر سراج الحق نے کہا ہے کہ جماعت اسلامی نے نوازشریف کے مینڈیٹ نہیں ان کی کرپشن کو چیلنج کیا ہے، کوئی مقدس گائے نہیں،پاناما لیکس میں سب پر ہاتھ ڈالنا چاہئے ،حکومتوں کے بدلنے کے باوجود کوئی تبدیلی نہیں آئی ملک میں حکمرانوں کی بداعمالیوں کی وجہ سے بحران ہے حکمرانوں نے قبلہ درست نہ کیا تو بحران کہرام میں بدل سکتا ہے جماعت اسلامی نے کرپشن فری پاکستان مہم شروع کرکے عوام کو آگاہی دی کرپشن کی وجہ سے قومی ادارے ناکام ہوگئے ہیں ہم صرف اشرافیہ نہیں، سب کا احتساب چاہتے ہیں موجودہ حکومت کے علاوہ پیپلز پارٹی اور پرویز مشرف کا بھی احتساب چاہتے ہیں ملک میں جرنیلوں ، لیگیوں یا پیپلز پارٹی کی حکومت رہی ہے حکومت کی ذمہ داری بنتی ہے کہ بلوچستان کے ناراض لو گوں سے بات چیت کریں اور ان کو راضی کریں بلوچستان کو ترقی وخوشحالی کی راہ پر گامزن کریں، کوئٹہ پریس کلب میں اظہار خیال کر تے ہوئے سراج الحق نے کہا کہ بلوچستان کے خوبصورت چہرے پر اب بھی خون کے دھبے موجود ہیں سالانہ تیس ارب خرچ کرنے کے باوجود سکیورٹی صورتحال ابتر ہے جب تک امن و امان قائم نہیں ہوتا صوبہ ترقی نہیں کرسکتابلوچستان میں سکیورٹی سے متعلق حالات نارمل نہیں جگہ جگہ ناکے، تلاشی ہوتی یے۔ خوف کا عالم ہے معاشی حالت امن وامان کی بہتری تک ٹھیک نہیں ہوسکتی حکومتوں کے بدلنے کے باوجود کوئی تبدیلی نہیں آئی۔ جماعت اسلامی نے کرپشن فری پاکستان مہم شروع کرکے عوام کو آگاہی دی کرپشن کی وجہ سے قومی ادارے ناکام ہوگئے ہیں اوورسیز پاکستانی باہر سے پیسہ پاکستان بھیجتے ہیں شرم کی بات ہے کہ حکمران طبقہ پیسہ بیرون ممالک بجھواتے ہیں۔ پاناما کیس میں جے آئی ٹی نے عدالت اور تاریخی کام کیا نواز شریف نے عدالتی فیصلہ تسلیم کرنے کی بجائے جی ٹی روڈ کا رخ کیا،نواز شریف غنیمت سمجھیں کہ جیل کی بجائے انہیں گھر بھیجا گیانوازشریف نے عدالتوں کو دھمکیاں دینا شروع کردی ہیں،پاناما لیکس میں سب پر ہاتھ ڈالنا چاہئے کیا ان کی مرغیاں سونے کے انڈے دیتی ہیں ان کے اثاثوں میں دن رات اضافہ ہورہا ہے سپریم کورٹ احتساب کا میکنزم بناکر سب سے پہلے سیاستدانوں سے شروع کرے فیصلے کے بعد کہتے ہیں کہ ملک میں کوئی صادق اور امین نہیں ہوسکتامسلم معاشرے میں یہ بات کہنا شرمناک ہے اگر وزیراعظم صادق اور امین نہیں ہوسکتا تو تمام جیلوں کے دروازے کھول کر سب چوروں کو آزاد کردینا چاہیے۔موجود بحران کے ذمہ دار سیاستدان ہیں کرپشن کا کینسر ملک بھر میں پھیل چکا ہے جسکی وجہ سے ادارے ناکام ہوگئے ہیں سٹیل مل سمیت تمام بڑے ادارے حکومتی کرپشن کی وجہ سے تباہ ہوئے پاناما سکینڈل منظر عام پر آ یا تو مطالبہ کیا کہ آزاد کمیشن بنایا جائے سیاستدان عوام کا پیسہ لوٹ کر بیرون ملک لے جاکر جائیدادیں بناتے ہیں ہماری پٹیشن پر سپریم کورٹ میں طویل سماعت ہوئی اور جے آئی ٹی بنی پانچ رکنی بینچ نے نااہلی کا فیصلہ سنایا وزیراعظم نااہل ہوئے امید تھی نواز شریف عدالتی فیصلہ قبول کریں گے مگر انہوں نے احتجاج کا راستہ اپنایا نواز شریف نااہل ہوئے تو آئین میں ترمیم کرنے کی باتیں ہورہی ہیں آرٹیکل باسٹھ تریسٹھ آئین کا لازمی جز ہے صادق و امین ہی قومی اسمبلی میں آنے چاہیں۔ عالمی ادارے کی رپورٹ کے مطابق سب سے زیادہ کرپشن بلوچستان میں ہے بلوچستان میں پینسٹھ فیصد بجٹ کرپشن کی نظر ہو جاتا ہے اس دھرتی کو پر امن انقلاب کی ضرورت ہے کل نواز شریف اور انکے بیٹے احتساب عدالت میں پیش نہ ہوئے لاقانویت کا انتخاب کرکے ملک کو انتشار کی طرف لے جانے کی کوشش کی جارہی ہے، موجودہ حالات میں کسی بھی حادثے کی ذمہ دار مسلم لیگ ن کی حکومت ہوگی باسٹھ تریسٹھ کا اطلاق صرف سیاست دانوں پر نہیں سب پر ہونا چاہیے ہمادی کوشش ہے کہ وہ اقدام کیا جائے جس سے جمہوریت مستحکم ہو امریکہ کا کشمیری تنظیم حزب المجاہدین کو دہشتگرد قرار دینا خارجہ پالیسی کی ناکامی ہے۔

مزید : صفحہ آخر