سیاستدانوں کے تدبر سے متقبلمیں وزرائے اعظم کی آئینی مدت محفوظ ہو سکتی ہے :میاں افتخار

سیاستدانوں کے تدبر سے متقبلمیں وزرائے اعظم کی آئینی مدت محفوظ ہو سکتی ہے ...

پشاور ( کرائمز رپورٹر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی سیکرٹری جنرل میاں افتخار حسین نے کہا ہے کہ اے این پی جمہوریت کی بقاء کیلئے ہر قربانی دیتی آئی ہے اور مستقبل میں بھی جمہوری عمل کو ڈی ریل نہیں ہونے دے گی، پالیمنٹ سپریم ہے لہٰذا سیاستدانوں کو اپنے تمام مسائل پارلیمنٹ میں حل کرنے چاہئیں،ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈاگ بیسود پبی میں ایک بڑے شمولیتی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر مسلم لیگ اور پی ٹی سے ڈیڑھ سو سے زاید افراد نے اینے خاندان اور ساتھیوں سمیت اے این پی میں شمولیت کا اعلان کیا ،میاں افتخار حسین نے پارٹی میں شامل ہونے والوں کو سرخ ٹوپیاں پہنائیں اور انہیں باچا خان بابا کے قافلے میں شامل ہونے پر مبارکباد پیش کی ، اپنے خطاب میں انہوں نے مزید کہا کہ 2013 میں ہم الیکشن ہارے نہیں تھے بلکہ ہمیں امپائر کے اشارے پر ہرایا گیا لیکن تحفظات کے باوجود ہم نے نتائج قبول کئے تاکہ جمہوریت ڈی ریل نہ ہو تاہم آنے والے الیکشن میں کوئی قوت نہیں آئے گی جو پی ٹی آئی کو اقتدار پیش کر سکے ، میاں افتخار حسین نے کہا کہ اے این پی واحد سیاسی جماعت تھی جس نے پانامہ پر اصولی مؤقف اپنایا اور اُسی مؤقف پر قائم رہتے ہوئے ہزار تحفظات کے باوجود سپریم کورٹ کا فیصلہ قبول کیا ، انہوں نے کہا کہ ہم الزامات اور انتقامی سیاست پر یقین نہیں رکھتے ،اور یہ اس ملک کی بد قسمتی رہی ہے کہ یہاں کسی منتخب وزیر اعظم کو اپنی معیاد پوری نہیں کرنے دی گئی ،انہوں نے کہا کہ مستقبل میں ایسے واقعات سے بچنے کیلئے سیاستدانوں کو تدبر کا مظاہرہ کرتے ہوئے احتساب کا عمل پارلیمنٹ کے ذریعے کرنا چاہئے ، انہوں نے کہا کہ عمران خان اور نواز شریف دونوں کرسی اقتدار کیلئے نبرو آزما ہیں اور جہاں کہیں بھی پختونوں کے حق کی بات ہو دونوں اس کی مخالفت میں یکجا ہو جاتے ہیں، انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف نے خیبر پختونخوا کو نظر انداز کر دیا ہے اور وزارت عظمیٰ کیلئے پنجاب کی سیاست کی جا رہی ہے ،انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ پرویز خٹک پر کرپشن کے الزامات میں آئے روز اضافہ ہوتا جا رہا ہے اور احتسابی اداروں کو اب حرکت میں آجانا چاہئے ،کرپشن کے خاتمے کے دعویداروں نے صوبے کے وسائل بے دردی سے لوٹ لئے ہیں، انہوں نے کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت سے عوام دوست پالیسیوں کی توقع رکھنا عبث ہے انتظامی امور سے نا بلد حکو مت کے دور میں ہر طبقہ فکر کے لوگ سراپا احتجاج ہیں،عوامی مسائل کا ادراک نہ رکھنے والی حکومت نے صوبے کو تاریخ کے بدترین مالی و انتظامی بحران سے دوچار کر دیا ہے ، انہوں نے کہا کہ صوبے میں ترقی کا پہیہ رک گیا ہے ،اور تمام امور ٹھپ ہو کر رہ گئے ہیں،جس کا خمیازہ دہشت گردی کے مارے عوام بھگت رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ عوام کی نظریں اے این پی پر لگی ہیں اور اسی سے توقعات وابستہ کر رکھی ہیں، انہوں نے کہا کہ الیکشن 2018میں کامیابی اے این پی کا مقدر ہے اور کامیابی کے بعد صوبے میں ترقی کا رکا ہوا عمل دوبارہ شروع کریں گے، انہوں نے تمام پارٹی کارکنوں سے اپیل کی کہ وہ الیکشن مہم کیلئے بھرپور تیاری کریں ۔

مزید : کراچی صفحہ اول