طیارہ حادثہ پر وفاقی وزیر کے بیان سے ملک کو شدیدنقصان ہوا،لاہورہائیکورٹ

طیارہ حادثہ پر وفاقی وزیر کے بیان سے ملک کو شدیدنقصان ہوا،لاہورہائیکورٹ

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہورہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس جواد حسن نے پی آئی اے کے 2 پائلٹس کے لائسنس معطلی کیخلاف دائر درخواست پرحتمی کارروائی سے روکتے ہوئے ڈی جی سول ایوی ایشن سمیت دیگر مدعاعلیہان کو نوٹس جاری کرکے جواب طلب کر لیاہے۔دوران سماعت فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ وفاقی وزیر کے بیان سے پاکستان کو دنیا بھر میں نقصان ہوا، دنیا بھر میں پی آئی اے کی پروازیں متاثر ہوئیں، عدالت جائزہ لے گی، وفاقی وزیر کے بیان سے کتنا نقصان ہوا؟۔فاضل جج نے معطل پائلٹ عامرمحمود، سید محسن علی کی درخواستوں پر سماعت کے دوران ریمارکس دیئے کہ یہ قومی مفاد کا کیس ہے سب کا موقف سنیں گے۔ موقف سن کر ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کا حکم دیں گے۔فاضل جج نے استفسار کیا کہ کیا جن کے لائسنس معطل کئے انہوں نے کوئی جہاز گرایا؟۔جس پائلٹ کے جہاز کا حادثہ ہوا اس کالائسنس تو ٹھیک تھا۔وفاقی وزیرکوبیان دینے کی کیا ضرورت تھی؟۔ بھارت میں ایسا معاملہ آیا تو انہوں نے خاموشی اختیار کی۔بھارت نے خاموشی سے پائلٹس گراؤنڈ کر دئیے۔درخواست گزاروں کا موقف ہے کہ ان کاموقف سنے بغیر ہی ڈی جی سول ایوی ایشن نے لائسنس معطل کر دیئے،عدالت سے استدعاہے کہ درخواست کے حتمی فیصلے تک لائسنس معطلی کے حکم پر عمل رآمد روکا جائے۔

لاہورہائیکورٹ

مزید :

صفحہ آخر -