وزیراعلٰی پنجاب کی وزیراعظم سے ملاقات، نیب نے عثمان بزدار کو طلب کر کے اختیارات سے تجاوز کیا: عمران خان 

    وزیراعلٰی پنجاب کی وزیراعظم سے ملاقات، نیب نے عثمان بزدار کو طلب کر کے ...

  

 اسلام آباد(سٹاف رپورٹر،آن لائن) وزیر اعظم عمران خان سے وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان بزدار نے جمعرات کو ون آن ون ملاقات کی۔ملاقات میں پنجاب کی موجودہ صو ر تحا ل پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔وزیر اعظم کو وزیر اعلی پنجاب نے نیب میں اپنے کیس سے متعلق بھی آگا ہ کیا۔ذرائع کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کا اس موقع پر کہناتھا اس کیس میں کوئی جان نہیں۔نیب نے عثمان بزدار کو طلب کرکے اپنے اختیارات سے تجاوز کیا ہے۔یہ ایکسائز کا کیس بنتا تھا۔عثمان بزدار کو وزیراعظم نے یقین دلایا کہ وہ اس کیس میں مکمل طور پر ان کے ساتھ ہیں کیونکہ اس کیس میں کوئی جان نہیں ہے۔پنجاب میں امن وامان کی صورتحا ل ا ور موجودہ سیاسی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال ہوا۔وزیر اعظم نے صوبے میں جار ی ترقیاتی منصوبوں کو بھی جلد مکمل کرنے کی ہدایت کی۔دریں اثناوزیراعظم عمران خان نے کہا کورونا کے ملکی معیشت پر منفی اثرات ختم کرنے کیلئے کامیاب جوان پروگرام بہت ضرو ر ی ہے، معاشی ترقی کیلئے نوجوانوں کو شراکت دار بنانا ہوگا۔ وزیراعظم سے معاون خصوصی عثمان ڈار اور مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے وزیر اعظم سے ملاقات کی، اس دوران کامیاب جوان پروگرام کے تازہ ترین اعدادوشمار پر بریفنگ دی گئی۔ پروگرام کے تحت نوجوانوان میں رقم کی تقسیم کا عمل تیز کرنے پر مشاورت ہوئی۔وزیراعظم کو بتایا گیا کہ چند دنوں میں 30 ہزار سے زائد نوجوانوں نے رقم کے حصول کیلئے درخواستیں دیں۔ نوجوانوں کی سہولت کیلئے 21 بینک رقم کی تقسیم کا عمل مکمل کریں گے۔ اب تک 1 ارب روپے کی رقم نوجوانوں میں تقسیم کی جا چکی ہے، مزید 53 ارب روپے سے زائد رقم کے حصول کی درخواستیں موصول ہوئی ہیں۔وزیراعظم کا اس موقع پر کہنا تھا کہ رقم کی تقسیم کا عمل مزید تیز اور شفاف انداز میں مکمل کیا جائے۔ پروگرام کے دوران رقم کی تقسیم کے عمل پر مکمل نظر رکھیں۔ شفافیت اور میرٹ پر کسی سطح پر بھی سمجھوتہ نہیں ہونا چاہیے۔ پاکستان میں سیاحت کے فروغ کے بہت سے مواقع ہیں ان سے فائدہ اٹھایاجاناچاہیے، پاکستان کواب سیاحت پرتوجہ مرکوزکرناہوگی،سیاحت سے متعلق قومی رابطہ کمیٹی بنانے کا بھی فیصلہ کرلیا گیا،معاون خصوصی زلفی بخار ی کو کمیٹی کا کنوینرمقرر کردیا گیا۔بدھ کو وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت سیاحت سے متعلق اعلی سطح کااجلاس ہوا جس میں قومی سیاحتی پالیسی کے حوالے سے بریفنگ دی گئی۔ اجلاس میں بتایا گیا قومی رابطہ کمیٹی ہرہفتہ اجلاس کریگی،جس کی 2ہفتے بعدوزیراعظم کورپورٹ دی جائیگی۔ اجلاس میں سیاحتی مقامات پرتجاوزات کیخلاف مہم چلانیکافیصلہ بھی کیا گیا۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ این سی سی کے اجلاس باقاعدگی سے منعقد کیے جائیں۔اجلاس میں صوبہ پنجاب اور صوبہ خیبر پختونخوا میں ٹورازم اتھارٹی کے قیام کے عمل کو جلد پایہ تکمیل تک پہنچانے کا فیصلہ کیا گیا۔اجلاس میں وزیرِ اعظم کو سرکاری ریسٹ ہاؤسز، گورنر ہاؤسز و دیگر سرکاری گیسٹ ہاؤسز کے مثبت استعمال کے حوالے سے لیے گئے فیصلوں پر عمل درآمد میں پیش رفت کی رپورٹ بھی پیش کی گئی۔دریں اثناوزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاک بھارت کشیدگی میں بھارت سے کرکٹ سیریز کا انعقاد مناسب نہیں۔برطانوی نشریاتی ادارے کو انٹرویو میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ موجودہ حالات میں بھارت سے سیریز کھیلنا مناسب نہیں، بھارت میں جیسی حکومت ہے ایسے میں سیریز کھیلنا خوفنا ک ہوگا۔ پاکستان اور بھارت کی سیریز ایشز سے بھی بڑا کرکٹ مقابلہ ہوتا ہے، ایشز سیریز کی اپنی اہمیت ہے لیکن پاکستان اور بھارت کی دوطرفہ سیریز کا کوئی مقابلہ نہیں کیونکہ یہ ایک مختلف کرکٹ ہوتی ہے جس میں ماحول جذبات، تنا، دباؤ اور لطف اندوزی کی کیفیت ہوتی ہے۔ 1979 اور 1987 میں بھارت میں سیریز کھیلی تھی، اس وقت دونوں ممالک کے مابین کرکٹ کیلئے ماحول سازگار تھا، اس وقت حکومتیں بھی رکاوٹیں دور کرنے اور قریب آنے کی کوشش کررہی تھیں۔ جب بھارت نے 2005 میں پاکستان کا دورہ کیا تو پاکستان کی ٹیم ہار گئی تھی مگر شائقین نے مہمان ٹیم کو بھرپور سپورٹ کیا تھا۔

عمران خان

مزید :

صفحہ اول -