”نسیم شاہ کم عمری میں ہی باﺅلنگ کاہنر جانتے ہیں مگر ابھی۔۔۔“ سہیل تنویر نے انتہائی مفید مشورہ دیدیا

”نسیم شاہ کم عمری میں ہی باﺅلنگ کاہنر جانتے ہیں مگر ابھی۔۔۔“ سہیل تنویر نے ...
”نسیم شاہ کم عمری میں ہی باﺅلنگ کاہنر جانتے ہیں مگر ابھی۔۔۔“ سہیل تنویر نے انتہائی مفید مشورہ دیدیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ ٹیم کے فاسٹ باﺅلر سہیل تنویر نے نسیم شاہ پر توقعات کا بوجھ نہ ڈالنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان میں ایک بہترین فاسٹ باﺅلر بننے کی تمام تر صلاحیتیں موجود اوروہ کم عمری میں ہی باﺅلنگ کا ہنر جانتے ہیں مگر ابھی ناپختہ ہیں۔ 

تفصیلات کے مطابق نجی خبر رساں کو دئیے گئے انٹرویو میں سہیل تنویر نے کہا کہ نسیم شاہ بہت باصلاحیت ہیں اور گیند کو دونوں طرف موو کرنے کے اہل بھی ہیں مگر ابھی اپنے کیریئر کے ابتدائی مراحل میں اور ناپختہ کار ہیں، ان سے ابھی ٹیسٹ میچز جتوانے کی توقعات وابستہ نہیں کرنا چاہئیں بلکہ ٹیم مینجمنٹ کو صبر سے کام لینا ہو گا۔ نسیم شاہ کی ٹیسٹ کرکٹ میں صلاحیتوں کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہوں تاہم مختصر طرز کی کرکٹ میں کارکردگی بہتر بنانے کیلئے انہیں مزید محنت کرنی ہے، انٹرنیشنل کرکٹ کے تقاضے مختلف ہوتے ہیں، نسیم شاہ میں ٹیلنٹ موجود اور امید ہے کہ وہ طویل عرصے تک ملک کی خدمت کریں گے۔

سہیل تنویر نے قومی ٹیم میں شمولیت کے معاملے پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مجھے اس کی کوئی وجہ سمجھ نہیں آتی، اگر عمر کی بات کریں تو سہیل خان مجھ سے بڑے ہیں، وہاب ریاض بھی ٹیم میں شامل اور کہیں زیادہ عمر کے محمد حفیظ و شعیب ملک بھی کھیل رہے ہیں،سلیکشن کا معیار صرف کارکردگی ہونا چاہیے۔ اگر مقصد پاکستان کی جیت ہے تو عمر کا خیال کئے بغیر فتوحات میں کردار ادا کرنے کے قابل کھلاڑیوں کو موقع ملنا چاہیے، تجربہ کار کھلاڑی ٹیم کیلئے زیادہ کارآمد ثابت ہو سکتا ہے،کوچنگ سٹاف کھلاڑیوں کی میدان میں رہنمائی نہیں کر سکتا،اس کیلئے سینئرز کی ضرورت ہوتی ہے۔

آل راﺅنڈر کا کہنا تھا کہ میری کارکردگی کا معیار برقرار رہا ہے جس کا اندازہ پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کے گزشتہ دونوں سیزنز اور قومی ٹی 20 ٹورنامنٹ میں تسلسل کیساتھ کارکردگی سے بخوبی لگایا جا سکتا ہے، قومی ٹیم کے سابق کوچ مکی آرتھر نوجوانوں پر مشتمل ٹیم بنانے کے حق میں تھے، ہر کسی کا اپنا نقطہ نظر ہوتا ہے، نئی مینجمنٹ کے بعد واپسی کیلئے پر امید ہوں۔ 

سہیل تنویر نے پی ایس ایل سیزن فائیو کے ملتوی میچز مکمل کرنے کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ فائنل میچ جیت کر ٹرافی اٹھانے کا لطف ہی کچھ اور ہوتا ہے، اگر یہ ممکن نہیں تو پھر پوائنٹس ٹیبل پر سرفہرست ملتان سلطانز کو چیمپین قرار دینا درست فیصلہ ہو گا۔ 

مزید :

کھیل -