14واں بین الاقوامی کتب میلہ کل سے کراچی میں شروع ہوگا

14واں بین الاقوامی کتب میلہ کل سے کراچی میں شروع ہوگا

کراچی (اسٹاف رپورٹر)پاکستان پبلشرزاینڈ بک سیلرز ایسوسی ایشن کے تحت 14واں بین الاقوامی کتب میلہ کل(جمعہ)21دسمبرسے ایکسپوسینٹرکراچی میں منعقد ہوگا،عالمی کتب میلے میں 17ممالک کے تقریباً40ادارے حصہ لیں گے ۔25دسمبر تک جاری رہنے والے عالمی کراچی کتب میلے کا افتتاح سندھ وزیرتعلیم سردارعلی شاہ کریں گے۔یہ بات بدھ کو پاکستان پبلشرزاینڈبک سیلرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین عزیزخالد نے مقامی ہوٹل میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی ۔اس موقع پر کنوینر آئی بی ایف اویس مرزا جمیل ،وقار متین خان ،ندیم مظہر ،ایم اقبال غازیانی ،اقبال صالح محمد ،ندیم اختر ،کامران نورانی ،سلیم عبدالحسین اور سید ناصر حسین بھی موجود تھے ۔خالد عزیز نے بتایا کہ کتب میلے کی تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں،پبلشرزاوربک سیلرزکے لیے ایکسپو سینٹر میں 330اسٹال مختص کیے گئے ہیں جو ایکسپوسینٹرکے ہال نمبر1،2اور3میں دیئے جائیں گے۔کراچی بین الاقوامی کتب میلے میں کئی غیرملکی پبلشرزشریک ہورہے ہیں جبکہ بعض غیرملکی پبلشرز کی فراہم کی جانیوالی کتب میلے میں موجود ہوں گی جن میں سنگاپور، ملیشیا ،ترکی اوربرطانیہ سمیت دیگرممالک کے پبلشرز شامل ہیں اس کے علاوہ کئی نئی کتابوں کی تقریب رونمائی بھی کتب میلے میں کی جائیں گی۔انہوں نے کہا 2005سے لگاتار منعقد ہونے والے کراچی بین الاقوامی کتب میلے کو پاکستان کے سب سے بڑے تجارتی میلے کا بھی اعزاز حاصل ہے ۔انہوں نے کہا کہ آج سے 14سال قبل شہر میں حالات کی خرابی کے باوجود ہم نے اس میلے کا انعقاد کیا اور یہ سلسلہ آج بھی جاری ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہمیں حکومت کا بالکل بھی تعاون حاصل نہیں ہے ۔ہم اپنی مدد آپ کے تحت اس سلسلے کو جاری رکھے ہوئے ہیں ۔ملک میں کاغذ کی قیمتوں میں اضافے کے باعث درسی کتب کی قیمتیں بھی آسمان پر جاپہنچیں ۔اس میلے میں بچوں کے لیے درسی کتب کے علاوہ جنرل نالج کے حوالے سے بھی کتابیں رعایتی قیمت پر دستیاب ہوں گی ۔انہوں نے کہا کہ پہلے اس میلے میں حالات کی خرابی کے باعث بچوں کی شرکت نہ ہونے کے برابر تھی تاہم اب حالات کی بہتری کے باعث بچے بھی بڑی تعداد میں اس میلے میں شرکت کرتے ہیں اور متعدد اسکول اپنے طلبا کو یہاں لے کر آتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اس طرح کے کتب میلے اب صرف عام میلوں کی حیثیت نہیں رکھتے نہ ہی یہ صرف پبلشرز کو ایک سادہ سا پلیٹ فارم مہیا کرتے ہیں بلکہ موجودہ دور میں عالمی کتب میلے حکومتوں اور مختلف مشنز پر کام کرنے والے اداروں کی ڈپلومیسی کا ایک آزمودہ آلہ ہے ۔انہوں نے کہا کہ کے آئی بی ایف کا حالیہ ایڈیشن پچھلے تمام ایڈیشن کے مقابلے میں منفرد ہوگا جس میں ایک عالمی کتب میلے کے ذریعہ پیشہ وارانہ مہارت اور دیگر امور کا تبادلہ بھی کیا جائے گا ۔ایڈوائزر بزنس ڈویلپمنٹ کراچی انٹرنیشنل بک فیئر اعجاز شاہ نے کہا کہ بین الاقوامی کتب میلے میں بھارتی کتابیں تو موجود ہوں گی لیکن پبلشر ز شرکت نہیں کریں گے ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے برعکس بھارتی حکومت اس قسم کے ایونٹس کی بھرپور سرپرستی کرتی ہے ۔ابھی حال ہی میں فرینکفرٹ جرمنی میں ہونے والے بک فیئر میں بھارت کے تعلیم ،کلچر اور خارجہ امور کے وزیر بھی شریک تھے جبکہ ہمیں کسی قسم کی حکومتی سرپرستی حاصل نہیں ہے ۔کے آئی بی ایف کے کنوینر اویس مرزا جمیل نے کہا کہ ہر سال ہونے والا یہ عالمی میلا پاکستان بھر کے لاکھوں طلبہ ،والدین ،ادبی و تدریسی شخصیات اور مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد کی خاص توجہ کا مرکز ہے ۔انہوں نے میلے میں حصہ لینے والے پبلشرز کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ان کی وجہ سے یہ کتب میلہ اپنی کامیابیوں کا تسلسل برقرار رکھ سکا ہے اور ہرسال ریکارڈ تعداد میں لو گ اس میں شرکت کرتے ہیں ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر