لاہور ہائی کورٹ کا گھریلو ملازمہ کو گلا دبا کر قتل کرنے کے واقعہ کا نوٹس

لاہور ہائی کورٹ کا گھریلو ملازمہ کو گلا دبا کر قتل کرنے کے واقعہ کا نوٹس

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائی کورٹ نے گھریلو ملازمہ کو گلا دبا کر قتل کرنے کے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج لاہور کوواقعہ کی غیر جانبدار اور شفاف کاروائی کرنے اور پولیس کی جانب سے اٹھائے گئے اقدامات کی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایات جاری کر دی ہیں۔ اخباری رپورٹ کے مطابق پتوکی کی رہائشی شمیم بی بی فیصل ٹاون کے علاقہ موچی پورہ میں کرائے کے مکان میں رہائش پذیر تھی۔ شدید معاشی مشکلات کا شکار شمیم بی بی نے تین ماہ قبل اپنی 16سالہ بیٹی عذراکو گھر کے کام کاج کےلئے ملازمت پر رکھوا دیا۔ واقعہ سے ایک روز قبل گھر کا مالک عاصم ،شمیم بی بی کے گھر آیا اور بتایا کہ اسکی بیٹی عذرا گھر سے کہیں چلی گئی ہے۔ بہت تلاش کیا مگر اس کے متعلق کچھ معلوم نہیں ہوسکا جس پر شمیم بی بی عاصم کے گھر گئی اور دیکھا تیسری منزل پر کمرے کے اندر عذرا کی نعش پڑی تھی۔ اطلاع پر پولیس موقع پر پہنچتے ہوئے نعش کو پوسٹمارٹم کےلئے مردہ خانے بھجوا دیا ہے۔ پولیس کے مطابق پوسٹمارٹم رپورٹ آنے کے بعد اصل حقائق سامنے آئیں گے۔عدالت عالیہ لاہور کے شکایات سیل نے مذکورہ واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے متعلقہ ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کو واقعہ کی تفصیلی رپورٹ ایک ہفتے میں پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

مزید :

صفحہ آخر -