عراقی فوج نے مغربی موصل کو گھیرے میں لے لیا، جنگی طیاروں کی مدد بھی حاصل

عراقی فوج نے مغربی موصل کو گھیرے میں لے لیا، جنگی طیاروں کی مدد بھی حاصل

  

موصل(این این آئی)عراقی فوج نے موصل شہر کے مغربی حصے کو خود کو دولتِ اسلامیہ کہلوانے والی تنظیم کے قبضے سے چھڑانے کے لیے حملہ شروع کر دیا ۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق اتوار کے روز سینکڑوں فوجی گاڑیاں، جنھیں جنگی طیاروں کی مدد حاصل ہے، صحرا میں پیش قدمی کرتے ہوئے موصل میں جہادیوں کے ٹھکانوں کی طرف بڑھتی ہوئی دکھائی دیں اور دیہات سے دھواں اٹھتا ہوا دیکھا جا سکتاتھا،عراقی وزیرِ اعظم حیدر العبادی نے حملہ شروع کرنے کا باقاعدہ اعلان کیا۔عراقی فوجیوں نے مغربی موصل کا تقریباً مکمل گھیراؤ کر لیا ہے، جب کہ امریکی قیادت والے اتحاد کی جانب سے دولتِ اسلامیہ کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔اس سال کی ابتدا میں سرکاری فوج نے خود کو دولتِ اسلامیہ کہلوانے والی تنظیم کے قبضے سے اس کے آخری ٹھکانے موصل کا مشرقی حصہ آزاد کروا لیا تھا۔وزیرِ اعظم عبادی نے ٹیلی ویڑن پر تقریر کرتے ہوئے کہا کہ ہم اس کارروائی کے نئے مرحلے کا اعلان کرتے ہیں، ہم موصل کے مغربی حصے کو آزاد کروانے کے لیے نینوا آ رہے ہیں۔نینوا وہ صوبہ ہے جس کا موصل دارالحکومت ہے۔انھوں نے کہاکہ ہماری فوجوں نے شہریوں کو داعش کی دہشت سے آزاد کروانے کا عمل شروع کر دیا ہے۔

مزید :

عالمی منظر -