سانحہ سیہون کے شہیدوں کے اعضاء کی توہین دہشتگردی سے بڑی دہشت گردی ہے

سانحہ سیہون کے شہیدوں کے اعضاء کی توہین دہشتگردی سے بڑی دہشت گردی ہے

  

لاہور(وقائعنگار)ہیومن رائٹس موومنٹ کے مرکزی صدرمحمدناصراقبال چیف آرگنائزرمیاں محمدسعید کھوکھرایڈووکیٹ،آرگنائزررابعہ رحمن ، سیکرٹری جنرل محمدرضاایڈووکیٹ ،سینئر نائب صدور ندیم اشرف،تنویرخان ،سلمان پرویز ،مرکزی نائب صدور ناصرچوہان ایڈووکیٹ، ممتاز حیدر اعوان ،محمدشاہدمحمود اور صدر قصور میاں اویس علی نے کہا ہے کہ سانحہ سیہون کے شہیدوں کے اعضاء کی توہین دہشت گردی سے بڑی دہشت گردی ہے۔کوئی زندہ ضمیر شہیدوں کے اعضاء کی توہین کرنے کاتصور بھی نہیں کرسکتا۔اس دلخراش واقعہ میں ملوث عناصر کوقرارواقعی سزادی جائے۔ شہداء کی تضحیک کرنیوالے بدبخت ہیں،ان پرہرگزرحم نہیں کیاجاسکتا ۔ شہیدوں کے اعضاء کچرے میں پھینکنے والے عناصر کے دماغ میں یقیناًکچرا بھراہے ورنہ وہ اس بربریت کامظاہرہ نہ کرتے۔وہ ایک اجلاس سے خطاب کررہے تھے ۔محمدناصراقبال خان نے مزید کہا کہ ریاست کوجوخطرات درپیش ہیں،حکمرانوں کی ترجیحات ان خطرات سے مطابقت نہیں رکھتیں۔شاہراہیں بنانے کی بجائے شہروں اورشہریوں کی حفاظت پرفوکس کیاجائے،ریاست کوامن وآشتی کاگہوارہ بنانے کیلئے دانشوروں اورشہریوں سے تجاویز طلب کی جاسکتی ہیں اوراس طرح دفاعی اداروں کومختلف اور بہترآئیڈیاز دستیاب ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ آزادکشمیر سمیت چاروں صوبوں کی پولیس کوبھی پاک فوج کی طرز پرٹریننگ دی جائے ،پولیس اہلکاروں کو بھی فوجی جوانوں کی طرح جدیدہتھیاروں کے استعمال کی تربیت دینا ہوگی۔پاک فوج کے زیراہتمام ٹریننگ سے جہاں پولیس اہلکاروں کے انفرادی رویوں اوران کی اجتماعی کارکردگی میں مثبت تبدیلی آئے گی وہاں تھانہ کلچر کی تبدیلی کاخواب بھی ضرور شرمندہ تعبیر ہوگا۔انہوں نے کہا کہ شہیدوں کے ورثاکی مالی مدد احسن اقدام ہے مگر ان کی زندگیاں بچانے کیلئے بھی رقم صرف کرناہوگی یعنی مخصوص ڈیوٹی کیلئے منتخب اہلکاروں کیلئے جدید حفاظتی سازوسامان کی فراہمی یقینی بنائی جائے۔ہم اپنے محافظوں کی شہادتوں کے متحمل نہیں ہوسکتے ،اگرہمارے سرفروش اورفرض شناس محافظ محفوظ نہ رہے توپھرشہراورشہریوں کی حفاظت کون کرے گا ۔انہوں نے کہا کہ ہمارا جس بزدل پڑوسی دشمن سے سامنا ہے اس سے کچھ بعید نہیں،مستقبل میں دشمن کے ساتھ کشمیر اورپانی سمیت دوسرے تنازعات کی بنیادپر جنگ ہوسکتی ہے لہٰذا ء بحیثیت قوم ہماری بیداری اوردفاعی تیاری ناگزیر ہے۔طلبہ وطالبات کوبھی دفاعی اورفرسٹ ایڈ کی تربیت دی جائے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -