پی ٹی آئی ریفارمز کمیٹی کا ممبران اسمبلی اور وزراء کو پارتی عہدے نہ دینے کا مطالبہ

پی ٹی آئی ریفارمز کمیٹی کا ممبران اسمبلی اور وزراء کو پارتی عہدے نہ دینے کا ...

  

بٹ خیلہ(بیوروپورٹ) پی ٹی آئی ریفارمز کمیٹی نے انٹرا پارٹی الیکشن کرانے سمیت منتخب ممبران اسمبلی اور وزراء کو پارٹی عہدے نہ دینے کا مطالبہ کردیا ۔ پارٹی ٹکٹیں دینے کے لئے غیر جانبدارآفراد پر مشتمل کمیٹی اور چھتری پر اُترنے کی بجائے اُمیدواروں اور عہدیداروں کے لئے سٹینڈرڈ کریٹیریا بنائی جائے ۔پارٹی کے اندر انتخاب ایک جمہوری عمل ہے لیکن چند عناصر انٹرا پارٹی الیکشن سے راہ فرار اختیار کرکے کارکنوں پر اپنی مرضی کے فیصلے مسلط کرنے کی کوشش کر رہے ہیں جو کہ پارٹی کے لئے نقصان دہ ہیں جس کے خلاف بنی گالہ تک جائینگے ۔ ان خیالات کا اظہار پی ٹی آئی ریفارمز کمیٹی کے اہم مشاورتی اجتماع جو کہ سابق ڈویژنل جنرل سیکرٹری ملاکنڈ محمد یونس خان کے رہائش گاہ واقع تھانہ پر منعقد ہوا سے کور کمیٹی کے ممبر علی آصغر خان ،سابق ڈویژنل صدر عنایت خان ،سابق ڈویژنل جنرل سیکرٹری محمد یونس خان ، رحمان اﷲ ایڈوکیٹ ، آرشد علی خٹک ،سیکرٹری انفارمیشن ریفارمز کمیٹی عمر سید خان ، محمد خان لالا ،مرکزی نائب صدر لیبر ونگ ملک طاہر رئیس ، انجینئر آمان اﷲ ، ڈاکٹرعنایت خان ،ارسلان خان ، ظفر خٹک ، زاہد خان ، رحمت غازی اور خوشدل خان سمیت دیگر مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ ریفارمز کمیٹی کے اجتماع میں ملاکنڈ ڈویژن کے تمام اضلاع سمیت کرم ایجنسی ، بٹگرام ، صوابی اور پشاور کے نظریاتی اور سرکردہ کارکنوں نے بھر پور شرکت کی ۔ اپنے خطاب میں علی آصغر خان نے کہا کہ ورکرز کے فیصلوں کا احترام کرنا چاہئیے ۔ ہم پارٹی کے خلاف نہیں ہیں بلکہ ورکرز کنونشن کے ذریعے کارکنوں کی آواز چےئرمین عمران خان اور دیگر قائدین تک پہنچائینگے کیونکہ کارکنوں کو نظر انداز کرنے کی پالیسی پارٹی کے لئے نقصان دہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ انٹرا پارٹی الیکشن کو تمام مسائل کا حل سمجھتے ہیں کیونکہ یہ ایک جمہوری عمل اور کارکنوں کا حق ہے ۔ سابق ڈویژنل صدر عنایت خان نے کہا کہ انٹرا پارٹی الیکشن نہ کرانے کی صورت میں متوازی تنظیمیں بنانے سے گریز نہیں کرینگے۔ عمران خان کو چند آفراد نے گھیرا ہوا ہے اور کارکنوں پر اپنی مرضی کے فیصلے مسلط کرانے کی کوشش کی جارہی ہے جس کے خلاف بھر پور حتجاج کرینگے ۔ مقررین نے کہا کہ عمران خان نے ہمیں حق کے لئے لڑنے کا طریقہ سکھایا ہے اس لئے انٹرا پارٹی الیکشن کے مطالبے ماننے اور منتخب ممبران سے پارٹی عہدے واپس لینے کے لئے ہزاروں کارکنوں کے ہمراہ بنی گالہ جائینگے ۔ مقررین نے کہا کہ ابتدائی دنوں میں وزیر اعلیٰ پرویز خان خٹک ،سپیکر آسدقیصر ،صوبائی وزیر شوکت یوسفزئی سمیت دیگر وزراء سے پارٹی عہدے واپس لئے گئے تھیں لیکن اب دوبارہ منتخب ممبران اور وزراء پارٹی عہدوں پر قابض ہو چکے ہیں اور ہر کوئی اپنے چہیتوں کو نواز رہے ہیں جس سے مایوس ہو کر کارکن دیگر جماعتوں میں شمولیت اختیار کر رہے ہیں جس پر ہم مذید خاموش نہیں رہیں گے اور عمران خان کو تمام حقائق سے آگاہ کرینگے ۔ مقررین نے فوری طور انٹرا الیکشن کرانے ، منتخب نمائندوں سے پارٹی عہدے واپس لینے ، چھتری کے ذریعے اُترنے کا راستہ روکنے کے لئے سٹینڈرڈ کریٹیریا اور پارٹی ٹکٹوں کے لئے غیر جانبدار کمیٹی بنانے کا مطالبہ کیا اور تمام نظریاتی کارکنوں کو ایک پلیٹ فارم پر جمع کرکے پارٹی کے مضبوطی کے لئے کوششیں کرنے کے عزم کا اعادہ کیا ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -