وزیر اعظم ، آرمی چیف نے سرحد پار دہشتگردوں کیخلاف کارروائیوں میں تیزی لانے کا فیصلہ کرلیا: رانا ثنا اللہ

وزیر اعظم ، آرمی چیف نے سرحد پار دہشتگردوں کیخلاف کارروائیوں میں تیزی لانے ...
وزیر اعظم ، آرمی چیف نے سرحد پار دہشتگردوں کیخلاف کارروائیوں میں تیزی لانے کا فیصلہ کرلیا: رانا ثنا اللہ

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن ) صوبائی وزیر قانو ن رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ وزیراعظم نوا ز شریف اور آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے سرحد پار چُھپے دہشتگردوں کیخلاف کارروائیوں کو مزید تیز کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے ۔

سپیکر ایاز صادق کا اپنے حلقہ انتخاب کا دورہ ،سانحہ چیئرنگ کراس میں شہید علی حسن کے اہلخانہ سے تعزیت

دنیا نیوز کے پروگرام ”نقطہ نظر“ میں گفتگو کرتے ہوئے رانا ثنااللہ کا کہنا تھا کہ وزیراعظم اور آرمی چیف کے فیصلے کے بعد سرحد کی دوسری جانب دہشتگردوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنا یا جائے گا جہاں شدت پسندوں نے اپنے سلیپر سیل اور ہیڈ کوارٹر ز بنا رکھے ہیں ، اور وہ وہاں بیٹھ کر ایک منظم پلاننگ کے پاکستان میں آکر کارروائیاں کرتے ہیں اور واپس فرار ہوجاتے ہیں ۔وزیرقانون نے پنجاب میں رینجرز کی تعیناتی کے حوالے سے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ آرٹیکل 245کے تحت ملک میں حالات کو مد نظر رکھتے ہوئے رینجرز کو طلب کیا جاسکتا ہے ،جس کی ایک مثال ہے کہ جہاں پر پولیس کام نہیں آتی وہاں پر سی ٹی ڈی کو طلب کیا جاتا ہے اور اسی طرح حالات پر قابو پانے کیلئے نیچے سے اوپر کی جانب جایا جاتا ہے کیونکہ ملک میں امن و امان سر فہرست ہیں ۔انہوں نے کہاکہ ملک میں دہشتگردی کیخلاف جتنے آپریشن ابھی تک ہورہے ہیں اسی آرٹیکل کے تحت کئے جارہے ہیں۔اب جو نوٹیفکیشن جاری کیاگیاہے اس کے تحت رینجرز اور سی ٹی ڈی کو مشترکہ آپریشن کرنے کے اختیار دئیے گئے ہیں جبکہ رینجرز کو سرچ اور گرفتار کرنے کے اختیارکے ساتھ ساتھ دہشتگردی کیخلاف ایکشن لینے اور موثر انداز میں کارروائی کرنے کیلئے تمام اختیارات ہونگے۔ہم نے ایک جے آئی ٹی تشکیل دی ہے جس میں ایک اہلکار رینجرزکا شامل ہوگا، اگر کارروای کے دوران کوئی اسلحہ ملتا ہے اور دہشتگردی کا مقدمہ درج نہیں ہوتا تو وہ معاملہ پولیس کے پاس ہی رہے گا۔

راناثنا اللہ نے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ لاہور میں 220سلیپر سیل خبر کہاں سے آئی ہے؟ جس کے پاس یہ خبر ہے میرا دعویٰ ہے کہ وہ ہمیں 200 نہیں صرف 20کاپتہ بتا دے سی ٹی ڈی ان کیخلاف فوراََ کارروائی کرے گی اور ملزمان کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا۔

مزید :

قومی -