پاک سعودی تجارت اور پنجاب فوڈ فیسٹیول

پاک سعودی تجارت اور پنجاب فوڈ فیسٹیول
پاک سعودی تجارت اور پنجاب فوڈ فیسٹیول

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

گزشتہ دنوں اسلام آباد میں پاک سعودی مشترکہ پروٹوکول برائے تجارت کا گیارہواں اجلاس دو روز تک جاری رہا۔ اس موقع پر سعودی عرب کے بزنس لیڈروں اور اہم عہدیداروں نے شرکت کی۔

سعودی وزیر سرمایہ کاری و تجارت نے سعودی وفد کی قیادت کی اور وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی سے اہم ملاقات کے علاوہ پاکستان کے وفاقی وزیر تجارت پرویز ملک سے فوڈ ایکسپورٹ اور پاکستانی لیبر کی تربیت کے بارے میں معاہدہ بھی کیا گیا۔


اس موقع پر پاکستان اور سعودی عرب کے اعلیٰ حکام کے درمیان صنعت و تجارت کے شعبہ میں پیش رفت کے لئے اہم مذاکرات ہوئے جن سے مستقبل قریب میں پاکستان کو بہت زیادہ معاشی فوائد حاصل ہوں گے اور پاکستانی لیبر کو تربیت دے کر سعودی عرب بھیجا جائے گا۔

یونائیٹڈ بزنس گروپ کے چیئرمین افتخار علی ملک نے سعودی عرب اور پاکستان پروٹوکول کی گیارہویں میٹنگ کو پاکستان کے لئے نیک شگون قرار دیتے ہوئے بتایا کہ سعودی عرب اور پاکستان کی اس دو روزہ میٹنگ میں بہت سے اہم معاشی مسائل زیر بحث آئے اور سعودی عرب نے بہت سے ایسے منصوبوں کی تائید کی ہے جس سے پاکستانیوں کو سعودی عرب میں روزگار کے نئے مواقع حاصل ہوں گے۔

اس ضمن میں اہم پیش رفت یہ ہے کہ سعودی عرب پاکستان میں افرادی قوت کو مختلف شعبوں میں کھپانے کے لئے پاکستان میں تربیتی ادارے قائم کرے گا۔ اس سلسلہ میں بہت جلد سعودی عرب کے اسلام آباد سفارتخانے میں ایک لیبر اتاشی بھی مقرر کیا جائے گا جو پاکستان میں مختلف ہنر سکھانے والے تکنیکی ادارے قائم کرے گا جہاں پاکستانی نوجوانوں کو ان شعبوں میں تربیت اور مہارت فراہم کی جائے گی جس سے انہیں سعودی عرب میں آسانی سے مختلف پیداواری یونٹوں میں کھپایا جا سکے گا۔

یہاں پر یہ جاننا بھی ضروری ہے کہ پاکستان کے 9.6 ملین جوان دنیا بھر میں برسر روز گار ہیں جن میں سے 96 فیصد مشرق وسطیٰ کے مختلف ممالک میں برسرِ روز گار ہیں اور زرمبادلہ پاکستان بھجوانے میں ان کا تناسب 30 فیصد ہے جن میں سے 6 ارب ڈالر صرف سعودی عرب میں مقیم پاکستانی بھیج رہے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ بہت جلد اوورسیز پاکستانیز اینڈ ہیومن ریسورس ڈویلپمنٹ کا ایک اعلیٰ سطحی وفد سعودی عرب کا دورہ کر رہا ہے۔


بزنس لیڈر افتخار علی ملک نے مزید بتایا کہ پاک سعودیہ پروٹوکول کے گیارہویں اجلاس میں حلال فوڈ پر بھی گفتگو ہوئی۔ اس ضمن میں سعودی عرب نے پاکستان پر زور دیا کہ وہ سعودی عرب سمیت مختلف اسلامی ممالک کو حلال فوڈ سپلائی کر کے پاکستان میں بے روز گاری ختم کرنے کے ساتھ ساتھ کثیر زر مبادلہ حاصل کر کے پاکستان کو خوشحال کرے۔

اس وقت دنیا بھر میں حلال فوڈ انڈسٹری کا تخمینہ 300 ارب ڈالر سے زیادہ ہے اس بڑی رقم میں سے پاکستان آٹے میں نمک کے برابر منافع حاصل کر رہا ہے جبکہ پاکستان اگر بین الاقوامی معیار کے مطابق حلال فود کی سپلائی شروع کرے تو صرف اس شعبہ سے پاکستان کی ایکسپورٹس میں چار گنا اضافہ ممکن ہے۔ سعودی عرب کے وفد نے یقین دلایا کہ سعودی عرب پاکستان میں حلال انڈسٹری کو ترقی دینے میں پورا تعاون کرے گا۔

جیسا کہ ہر کوئی جانتا ہے کہ پاکستان میں کام کرنے والوں کی بے روز گاری ختم کرنے کے لئے مختلف نوعیت کے منصوبے شروع کئے گئے ہیں لیکن بے روز گاروں کو اسلامی ممالک میں برسرِ روز گار کرنے کے لئے سعودی عرب کے وزیر تجارت اور سرمایہ کاری نے پاکستانی وزیر تجارت کے ساتھ جس معاہدے پر دستخط کئے ہیں اس کے دور رس نتائج برآمد ہوں گے اور پاکستان میں زر مبادلہ کے ذخائر ضرورت کے مطابق ہو جائیں گے۔

انسانی صلاحیتوں میں اضافے اور مختلف فنون کے ادارے قائم کرنے کے لئے اسلام آباد میں قائم سعودی سفارتخانے میں آئندہ ماہ ایک لیبر اتاشی کا تقرر بھی کر دیا جائے گا جس کا بنیادی کام یہ ہوگا کہ وہ پاکستان میں تکنیکی ادارے قائم کرنے میں سعودی عرب کی طرف سے بھرپور کردار ادا کرے گا۔


پاکستان اور سعودی عرب مشترکہ پروٹوکول کی گیارہویں وزارتی میٹنگ میں اس بات پر بھی اتفاق کیا گیا کہ تیل کے شعبہ میں سعودی عرب پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے کے علاوہ تکنیکی معاونت بھی کرے گا اس ضمن میں پاکستان میں تیل کی پیداوار بڑھانے اور نئی ریفائنری قائم کرنے پر بھی سعودی عرب نے آمادگی کا اظہار کیا۔ نئی مصنوعات کی دونوں ملکوں میں نمائشوں پر بھی اتفاق کیا گیا۔

پاکستان سعودی جوائنٹ بزنس کونسل کی پہلی میٹنگ میں بھی نئی سرمایہ کاری کے منصوبے زیر بحث آئیں گے۔ اس اہم کونسل کا اجلاس آئندہ ماہ ہونے کی امید ہے، سعودی عرب نے پاکستانیوں کی ویزا فیس میں کمی پر بھی آمادگی کا اظہار کیا ہے۔ نیز ٹریڈ کامرس انرجی، فوڈ پیکنگ، قونصلر افیئرز، تعلیم و صحت کے شعبوں میں بھی تعاون بڑھانے کا عندیہ دیا ہے۔


یاد آیا کہ لاہور میں دو روزہ ’’پنجاب فوڈ فیسٹیول‘‘ حیرت انگیز کامیابی سے ہمکنار ہوا ہے پنجاب فوڈ اتھارٹی کے سربراہ نورالامین مینگل نے بتایا کہ ہمارا خیال تھاکہ دس ہزار افراد آئیں گے لیکن دونوں روز لاکھ سے زیادہ افراد نے جوش و خروش سے شرکت کر کے ایک نیا ریکارڈ قائم کر دیا۔

سارک چیمبر آف کامرس کے نائب صدر افتخار علی ملک نے بتایا کہ دو روزہ فوڈ فیسٹیول کی کامیابی دیکھ کر بہت خوشی ہوئی اور میں نورالامین مینگل صاحب کو مشورہ دوں گا کہ پنجاب فوڈ فیسٹیول میں عوام کا جوش و خروش دیکھتے ہوئے فیسٹیول کو باقاعدگی سے بہار کے دنوں میں منعقد کیا کریں۔

عوام کی اکثریت نے شکایت کی ہے کہ صرف ایک ہال میں فیسٹیول کا انعقاد کرنے سے انہیں آزادی سے گھومنے پھرنے اور شاپنگ کرنے میں مشکلات پیش آتی ہیں اس لئے آئندہ سال سے پنجاب فوڈ فیسٹیول کو دو سے بڑھا کر تین روزہ کر دیا جائے اور ایک ہال کی بجائے تینوں ہال اس مقصد کے لئے استعمال کئے جائیں۔

یاد رہے کہ پہلے لاہور ایکسپو کے صرف دو ہال ہوا کرتے تھے لیکن ڈیزائن کے مطابق اس کے چار ہال ہونے تھے لیکن کسی نے توجہ نہ دی یونائیٹڈ بزنس گروپ کے سرپرست ایس ایم منیر نے ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی طرف سے تیسرا ہال تعمیر کرا دیا ہے۔ جلد ہی چوتھا ہال بھی تعمیر کے مراحل طے کرے گا۔

مزید :

رائے -کالم -