سعودی عرب کیلئے تشویشناک خبر آگئی، وہ کام ہونے جارہا ہے جو پچھلے 14 سال سے نہ ہوا

سعودی عرب کیلئے تشویشناک خبر آگئی، وہ کام ہونے جارہا ہے جو پچھلے 14 سال سے نہ ...
سعودی عرب کیلئے تشویشناک خبر آگئی، وہ کام ہونے جارہا ہے جو پچھلے 14 سال سے نہ ہوا

  


ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک) تیل کی گرتی ہوئی قیمتوں کے باعث سعودی عرب کی معیشت زبوں حالی کا شکار ہے۔ اب عالمی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف نے بھی سعودی عرب کے لیے ایک بری پیش گوئی کر دی ہے۔ آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ تیل کی گرتی ہوئی قیمتوں کے باعث سعودی عرب مالی بحران کا شکار ہے اور رواں سال اس کی معیشت کی شرح نمو گزشتہ 14سال کی کم ترین سطح پر چلی جائے گی۔ آئی ایم ایف کے مطابق دنیا میں سب سے زیادہ تیل پیدا کرنے والے ملک سعودی عرب کی معاشی شرح نمو اس سال 1.2فیصد رہنے کی توقع ہے۔ اس کے برعکس ایچ ایس بی سی نے سعودی عرب کی اس سے بھی کم معاشی شرح نمو کی پیش گوئی کی ہے۔ 2015ءمیں سعودی عرب کی شرح نمو 3.4فیصد تھی۔

مزید پڑھیں: بڑے عرب ملک میں غیر ملکی مزدوروں کیلئے شاندار اعلان ہوگیا، کمپنیوں کو سخت ترین وارننگ جاری

اریبین بزنس ڈاٹ کام کی رپورٹ کے مطابق طویل عرصے سے تیل کی قیمتوں میں مسلسل گراوٹ کے باعث سعودی عرب کو گزشتہ سال 98ارب ڈالرز (تقریباً100کھرب روپے)کے بجٹ خسارے کا سامنا کرنا پڑا .۔ اس بجٹ خسارے کے باعث سعودی عرب کو اپنے اخراجات میں واضح کٹوتیاں کرنی پڑیں۔ ریاست نے بجلی کی مد میں دی جانے والی سبسڈی ختم کی اور بانڈز فروخت کرکے سرمایہ حاصل کیا اور اپنا بجٹ خسارہ پورا کیا۔ رپورٹ کے مطابق اب ایران بھی اپنا تیل مارکیٹ میں لانے جا رہا ہے۔ اس لیے تیل کی قیمت واپس 100ڈالر فی بیرل تک پہنچنا تقریباً ناممکن دکھائی دیتا ہے، لہٰذا سعودی عرب کے لیے مزید مشکلات پیدا ہونے والی ہیں۔

مزید : بین الاقوامی