سانحہ ساہیوال میں مارے جانے والے ذیشان جاوید کے بارے میں اہل محلہ نے ایسا انکشاف کر دیا کہ جان کر آپ کے غصے کی انتہا نہ رہے گی

سانحہ ساہیوال میں مارے جانے والے ذیشان جاوید کے بارے میں اہل محلہ نے ایسا ...
سانحہ ساہیوال میں مارے جانے والے ذیشان جاوید کے بارے میں اہل محلہ نے ایسا انکشاف کر دیا کہ جان کر آپ کے غصے کی انتہا نہ رہے گی

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)سانحہ ساہیوال میں سی ٹی ڈی کے ہاتھوں قتل ہونے والے ذیشان جاوید کے بارے میں اہل محلہ نے ایسا انکشاف کیا ہے کہ واقعہ کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی بھی ہکا بکا رہ جائے گی ۔

نجی ٹی وی کے مطابق ساہیوال میں سی ٹی ڈی کے ہاتھوں جعلی مقابلے میں جاں بحق ہونے والے ذیشان جاوید جسے سی ٹی ڈی نے کالعدم تنظیم داعش کا سرغنہ قرار دیا ہے کہ بارے میں اہل محلہ نے انکشاف کیا ہے کہ مقتول ذیشان جاوید انتہائی شریف اور پانچ وقت کا نمازی تھا ،اس کا کیمپیوٹر کا کاروبار تھا ۔اہل محلہ کا کہنا تھا کہ مقتول ذیشان  انتہائی شریف اور دھیمے مزاج کا آدمی تھا ،وہ نہ تو دہشت گرد تھا اور نہ ہی کبھی وہ دہشت گردوں کا ساتھی تھا ،علاقے کا ہر آدمی ان کو جانتا تھا ،اس کا باپ انتقال کر چکا تھا جبکہ اس کی والدہ بیمار اور  ٹانگوں سے معذور ہے۔اہل محلہ کا کہنا تھا کہ مقتول  ذیشان کااس محلے میں ذاتی گھر تھا جبکہ اس کا چھوٹا بھائی ایک سال پہلے پولیس میں بھرتی ہوا تھا ،اگر ذیشان دہشت گرد تھا تو پھر اس کا بھائی ڈولفن پولیس میں کیسے بھرتی ہو گیا ؟۔اہل محلہ کا کہنا تھا کہ پولیس اور سی ٹی ڈی اہلکار زیشان کے بارے میں جھوٹ بول رہے ہیں ۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -