شانگلہ‘ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام میں مستحقین نظر انداز

  شانگلہ‘ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام میں مستحقین نظر انداز

  



الپوری(آفتاب حسین)شانگلہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام میں مستحقین اور بیواوں کو نظر انداز کیا گیاجبکہ اسی پروگرام سے ایک لاکھ چالیس ہزار سے زائد سرکاری ملازمین نے وظیفہ حاصل کیا ہے۔ان میں دو ہزار پانچ سو سے زائد گریڈ21کے افسران نے بھی یہ وظیفہ اپنے بیگامات کے نام وصول کیے ہیں۔ان کے خلاف کاروئی کی جانی چاہئے اور مستحقین کے رقومات کی رایکوری کی جائے تاکہ دوسروں کیلئے عبرت بنے۔ ان لوگوں نے دھوکا دہی سے اپنا سکور کم دکھا کراپنے اپ کو غریب ظاہر کیا ہے اور مستحقین کا سکور بڑھا کر ان کو غیر مستحق دکھایاہیں۔بی ائی ایس پی کے چیئر پرسن کو حقائق منظرعام لانے پر خیراج تحسین پیش کرتے ہیں اور عوامی حلقے نے حکمراں جماعت پی ٹی ائی کے نئے سروے میں مستحقین،بیواؤں اور غریب خاندانوں کو خصوصی ترجیح دینے کا مطالبہ کرتے ہوئے بی ائی ایس پی سے غلط مالی فائدہ اٹھانے والوں کے خلاف کاروائی اور ریکوری کرنی چاہئے۔ حکومت نے ان ملازمین کے خلاف کاروائی کا فیصلہ کیا ہیں عوام نے حکومت کے اس اقدام کو سراہا ہیں۔بی ائی ایس پی انتہائی غریب خاندانوں کو معاونت فراہم کرنا تھا مگر دیگر فلاہی منصوبوں کی طرح حکام نے اس بہتی کنگا میں ہاتھ دو لیے۔اور غریب کا حق اپنے نام کردیا۔حکومت بی ائی ایس پی سے فائدہ اٹھانے والے ان سرکاری ملازمین سے ہر وقت یہ رقم وصول کر سکتا ہیں لیکن جب بااثر، سیاسی، مالدار،غیر مستحق نے غریبوں اور بیواوں کا حق چینا ہیں ان کے لسٹیں بھی پبلک مقامات پر لگائیں جائے یہ بااثر مافیاں نے دوکھا دہی سے غریبوں کا احتصال کیا ہیں۔2005کی زلزلے میں متاثرین کے امدادی چیک اور پیکیجیز بھی غیر متاثرین نے لیے تھے۔اسی طرح اس مافیا نے2010کے سیلاب میں بھی متاثرین کا حق ماراتھااورپھرسے 2015کے زلزلے میں بھی ان لوگوں نے متاثرین کے حق کو چینا تھا۔اس کالے دھندے میں سیاسی اور معززین علاقہ پیش پیش رہیں۔اس میں بڑے پیمانے پر بے قعدگیاں ہوئی تھی جسمیں تحقیقات ہونی چاہیے۔عوامی حلقوں نے حکومت کے اس اقدام کو سراہا ہیں اور امید ظاہر کی ہے کہ صاف وشفاف سروے کرکے ان کی لسٹیں پبلک کی جائے تاکہ عوام کو پتا چلے کہ یہ حکومت شفافیت پر پورا یقین رکھتی ہیں اورحقدار کو ان کا حق دیتی ہیں۔یہ غاصب لوگ ہر وقت غریبوں کا احتصال کررہیں ہیں۔زلزلہ ذدگان کے رقومات ان مافیا نے متعلقہ حکام سے مل کر ہڑپ کرلیے۔عوام کا مطالبہ ہیں کہ زکواۃ،بیت المال اور صحت انصاف کارڈ کی بھی تحققات ہونی چاہیئے۔بی ائی ایس پی کا سیرے سے سروے کرکے غیر مستحقین کو نکالا جائے اور ان سے رقومات کی ریکوری کرکے مستحقین کو دیا جائیں۔اور ادائیگی کے طریقہ کا کو اسان،ممکن اور صاف وشفاف رکھا جائیں۔۔

مستحقین نظرانداز

مزید : پشاورصفحہ آخر