نیا شہریت قانون انڈین سپریم کورٹ میں چیلنج، دہلی میں نیشنل سکیورٹی ایکٹ نافذ، بھارتی اقدامات پر خاموش نہیں رہیں گے: عمران خان

نیا شہریت قانون انڈین سپریم کورٹ میں چیلنج، دہلی میں نیشنل سکیورٹی ایکٹ ...

  



نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)شہریت کے منتازعہ قانون کے خلاف احتجاج سے خوفزدہ بھارتی حکومت نے دارالحکومت نئی دہلی میں بھی نیشنل سکیورٹی ایکٹ (این ایس اے) نافذ کردیا۔نئی دہلی میں شہریت کے متنازع قانون کے خلاف ہر طبقہ فکر سے تعلق رکھنے والے لوگ احتجاج کررہے ہیں جس میں جواہر لعل نہرو یونیورسٹی (جے این یو) اور جامعہ ملیہ اسلامیہ کے طلبہ و طالبات بھی شامل ہیں۔بھارتی حکومت اِس احتجاج سے اس قدر خوفزدہ ہے کہ اب نیشنل سیکیورٹی ایکٹ نافذ کردیا ہے۔بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق نئی دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر انیل بائیجال نے ایک حکمنامے کے ذریعے 3 ماہ کے لیے نیشنل سیکیورٹی ایکٹ نافذ کیا جس کی مدت 19 جنوری سے 18 اپریل تک ہوگی۔این ایس اے کے تحت پولیس کو اختیا ر دیا گیا ہے کہ قومی سلامتی کے خطرے کے پیش نظر کسی بھی شخص کوحراست میں لے سکتی ہے اور ایکٹ کے تحت پولیس 10 دن بنا جرم بتائے کسی بھی شخص کو اپنی حراست میں رکھ سکتی ہے۔خیال رہے کہ اگست 2019 میں آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد مقبوضہ کشمیر میں بھی نیشنل سیکیورٹی ایکٹ نافذ ہے۔دوسری طرف بھارت میں مظاہرین نے وزیراعظم نریندر مودی کوہزاروں خطوط ارسال کرنے کیلئے ایک پوسٹ کارڈ مہم شروع کی ہے ان خطوط میں مسلمان مخالف شہریت کا متنازع ترمیمی قانون واپس لینے پر زور دیا جائے گا۔ نئی دہلی کے مسلمان اکثریتی علاقے شاہین باغ میں مظاہرین نے پوسٹ کارڈز میں ہندوقوم پرست رہنما سے کہا کہ وہ انہیں شہریت ثابت کرنے پر مجبور نہ کریں۔ادھر حزب اختلاف کی جماعتوں اور سماجی کارکنوں نے شہریت قانون کو بھارتی سکیولر آئین کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے اسے سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا ہے۔

این ایس اے

اسلام آباد،لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ بھارت نے ایل او سی کے دوسری جانب آباد بے گناہ شہریوں پر حملے جاری رکھے تو پاکستان کیلئے خاموش رہنا مشکل ہوجائے گا،لائن آف کنٹرول پر نہتے شہریوں پر بھارتی حملے معمول بن گئے ہیں،سلامتی کونسل مقبوضہ کشمیر کی جانب ایل او سی پر عسکری مبصر مشن کی واپسی کیلئے اصرار کرے،بھارت کی جانب سے ایک خودساختہ اور جعلی حملے کا اندیشہ ہے۔ اتوار کو سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں عمران خان نے کہا میں ہندوستان کیساتھ عالمی برادری پر بھی واضح کردینا چاہتا ہوں کہ اگر بھارت جنگ بندی لکیر کے اس پار عسکری حملوں میں نہتے شہریوں کے بہیمانہ قتل عام کا سلسلہ دراز کرتا ہے تو پاکستان کیلئے سرحد پر خاموش تماشائی بنے بیٹھے رہنا مشکل ہو جائے گا۔ اپنی ایک اور ٹویٹ میں وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مہاتیر محمد اور مجھے ایک طرح کے مسائل کا سامنا ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ اسلامی دنیاکے سب سے تجربہ کار اور کامیاب سیاستدان کا بھی بالکل اسی قسم کے مسائل سے سابقہ رہا جن کاسامنا آج میری حکومت کو ہے۔انکی راہ میں بھی وہی سیاسی مافیا حائل ہوا جس نے اداروں کی تباہی کے ذریعے ملائشیا کوقرض کی دلدل میں دھنسایا اور اسکا دیوالیہ نکال دیا۔علاوہ ازیں وزیر اعظم عمران خان کل (منگل) کے روز ملک بھر کے تاجر رہنماؤں کے کنونشن خطاب کریں گے۔ اس سلسلہ میں تاجر تنظیموں کے عہدیداروں اور رہنماؤں کو باضابطہ دعوت نامے ارسال کردئیے گئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم عمران خان تاجروں کے لئے آسان ٹیکس نظام وضع کرنے کے حوالے سے تاجر نمائندوں کو اعتماد میں لیں گے۔ ذرائع کے مطابق کنونشن میں ایف بی آر اور تاجر نمائندوں کے درمیان 30اکتوبر کوہونے والے معاہدے پر مکمل عملدرآمد کا بھی اعلان کیا جائے گا۔کنونشن میں حکومت کی معاشی ٹیم کے اراکین اورچیئرمین ایف بی آر شبر زیدی بھی شریک ہوں گے۔

عمران خان

مزید : صفحہ اول