یمن، فوجی کیمپ کی مسجد پر میزائل، ڈرون حملے، 80سے زائد اہلکار ہلاک، 148زخمی

یمن، فوجی کیمپ کی مسجد پر میزائل، ڈرون حملے، 80سے زائد اہلکار ہلاک، 148زخمی

  



صنعا (مانیٹرنگ ڈیسک)یمن کے وسطی علاقے میں مبینہ طور پر حوثی باغیوں کے میزائل اور ڈرون حملوں میں 80 سے زائد فوجی ہلاک اور سینکڑوں زخمی ہوگئے۔خبر ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق میڈیکل اور عسکری ذرائع کا کہنا تھا کہ حوثی باغیوں اور سعودی سربراہی میں لڑنیوالے یمنی حکومتی اتحاد کے درمیان چند ماہ تک امن رہنے کے بعد یہ پہلی بڑی کارروائی ہے۔عسکری ذرائع کا کہنا تھا کہ حوثی باغیوں نے دارالحکومت صنعا کے مشرق میں واقع صوبے مارب میں قائم فوجی کیمپ کی مسجد پر حملہ کیا۔مارب کے مرکزی ہسپتال کے میڈیکل حکام کے مطابق حملے میں ہلاک ہونے والے فوجیوں کی لاشیں اور 148 زخمیوں کو ہسپتال لایا گیا۔سعودی ٹی وی الحدث نے حملے کے بعد ویڈیو جاری کی جس میں فرش میں خون اور لاشوں کے ٹکڑوں کو دکھایا جاسکتا ہے۔یمن میں ڈرون اور میزائل حملے ایک ایسے وقت میں ہوئے ہیں جب ایک روز قبل ہی اتحادی حکومتی فورسز نے صنعا کے شمالی ضلع نیہم میں حوثی باغیوں کے خلاف بڑے پیمانے پر کارروائی شروع کی تھی۔سرکاری نیوز ایجنسی کے مطابق نیہم میں حوثی باغیوں کے خلاف کارروائی جاری ہے جہاں درجنوں باغیوں کو مارا گیا ہے اور کئی زخمی ہیں۔عالمی سطح پر تسلیم شدہ یمنی حکومت کے صدر عبدالرب منصور ہادی نے مسجد پر حملے کی مذمت کی اور اس کارروائی کو دہشت گردی اور بزدلانہ اقدام قرار دیا۔دوسری جانب حوثی باغیوں کی جانب سے اس کارروائی کی ذمہ داری قبول کرنے کے حوالے سے کوئی بیان سامنے نہیں آیا۔

یمن حملہ

مزید : علاقائی