آٹا بحران تبدیلی سرکار کی طرف سے عوام کیلئے سا ل نو کا تحفہ ہے: امیر مقام

  آٹا بحران تبدیلی سرکار کی طرف سے عوام کیلئے سا ل نو کا تحفہ ہے: امیر مقام

  



سوات (آن لائن) پاکستان مسلم لیگ ن صوبہ خیبر پختونخوا کے صدر انجینئرا میر مقام نے کہا ہے کہ آٹا بحران تبدیلی سرکار کی طرف سے عوام کیلئے سال نو کا تحفہ ہے، 2020 کو ترقی اور خوشحالی کا سال قرار دینے والوں نے سال نو کا آغاز غریبوں کو رُلانے سے کر دیا ہے حکمرانوں پر انتقام کا بھوت سوار ہے سیاست میں انتقام کو متعارف کرانے والوں نے سیاسی مخالفین کو دیوار کے ساتھ لگا دیاہے تبدیلی والوں نے انتقامی سیاست کی بنیاد رکھ کر سیاست کو ذاتی دشمنیوں میں تبدیل کر دیا ہے نیب کو انتقام کے طور پر استعمال کرنا خطرناک عمل ہے ان نالائق حکمرانوں کے ساتھ عوام کے فلاح و بہبود اور ملک کو بحرانوں سے نکالنے کا کوئی پروگرام نہیں ہے انہوں نے کہا کہ آج غریب لوگ ایک کلو آٹے کیلئے در در کی ٹھوکریں کھانے پرمجبور ہیں جبکہ وزراء لوگوں کو کھانا کم کھانے اور چند مہینوں تک ادھے پیٹ گزارہ کرنے کے مشورے دیکر ان کے زخمیوں پر نمک پاشی کر رہے ہیں بلکہ غریبوں کی غربت کا مذاق اُڑایا جا رہا ہے کوئی وزیر لوگوں کو سفید آٹے کے بجائے سرخ آٹا کھانے کا مشورہ دے رہا ہے تو کوئی وزیر یہ کہتا ہے کہ دسمبر کے مہینے میں لوگ کھانا زیادہ کھاتے ہیں اسلئے آٹا بحران پیدا ہوا ہے ان لوگوں کے ساتھ آٹا بحران پر قابو پانے کیلئے کوئی حکمت عملی یا طریقہ کار نہیں ہے اسلئے وہ غیر سنجیدگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں انہوں نے کہا کہ ایک وفاقی وزیر نے تو پنجاب سے آٹا بند ہونے کی صورت میں پنجاب پر بجلی بند کرانے کا اعلان بھی کیا تھا اور ان کا واضح موقف تھا کہ اگر ہمارے دور حکومت میں پنجاب سے آٹا بند ہو گیا تو ہم ان پر بجلی بند کر دینگے اور”بجلی زما،مرضی زما“ کا نعرہ بھی متعارف کرایا تھا انہوں نے کہا کہ آج پنجاب کے عمل پر ہم ان کو رد عمل کے انتظار میں ہے، اس نا اہل اور نالائق حکمرانوں کے ساتھ بحرانوں پر قابو پانے کیلئے کوئی پروگرام اور حکمت عملی نہیں ہے انہوں نے کہاکہ یہ حکومت ایک کام خوب جانتی ہے وہ مخالف سیاسی لوگوں کو انتقام کا نشانہ بنانا جس پر وہ سختی سے عمل پیرا ہے انہوں نے کہا کہ 2020 کو ترقی اور خوشحالی کا سال قرار دینے والوں نے سال نو کا آغاز عوام سے ان کے منہ کا نوالہ چھیننے سے کر دیا ہے لوگوں کے مسائل اور مشکلات میں تسلسل کے ساتھ اضافہ ہوتا جا رہا ہے جبکہ حکمران طبقہ آرام سے مزے اُڑا رہے ہیں انہوں نے کہا کہ انتقامی سیاست کو متعارف کرکے حکمرانوں نے ایک خطرناک کھیل کھیلا ہے اور آج جو حکمران بو رہے ہیں کل ان کو اپنے بوئی ہوئی کاٹنا پڑے گی انہوں نے کہاکہ انتقامی سیاست ملک کی سیاسی بنیادوں کو کھوکھلا کر رہی ہے اب عوام کو ان کی اصلیت کا پتہ چل چکا ہے عوام اور ان کے اپنے اتحادی بھی ان سے بد ظن ہو چکے ہیں۔

امیر مقام

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر