کروڑوں کا فراڈ،ملزموں کی ضمانت منظور

کروڑوں کا فراڈ،ملزموں کی ضمانت منظور

  

ملتان (خصو صی  رپورٹر) ہائیکورٹ ملتان بنچ کیجج جسٹس سردار (بقیہ نمبر13صفحہ6پر)

محمد سرفراز ڈوگر نے کروڑوں روپے لوٹنے والے راجن پور کے ایک وکیل نجیب اللہ کی ملازمہ اور کیس کی نامزد ملزمہ ثمرین محمود زوجہ زاہد حسین کی درخواست ضمانت بعد از گرفتاری منظور کرلی اور اسے ایک لاکھ روپے کے مچلکے پر رہا کرنے کا حکم دیا ہے۔ ایف آئی اے نے نجیب اللہ کے خلاف سادہ لوح افراد سے منافع کا لالچ دیکر کروڑوں روپے لوٹنے کے الزام میں زیر دفعات 3-4 اف اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ۔ 420,418,467,468 ت پ  مقدمہ نمبر 20/2021 درج کیا تو وہ دبئی فرار ہو گیا چنانچہ انٹرپول کی مدد سے اسے وطن واپس لایا گیا جس نے سینکڑوں لوگوں سے معقول ماہانہ منافع کا لالچ دے کر  کروڑوں روپے ہتھیائے ہوئے تھے ابتدا میں منافع تقسیم کرتا رہا بعد ازاں وہ ملک سے فرار ہو گیا ایف آئی اے نے اسکے ملازمین کو بھی گرفتار کر لیا ریکارڈ کے مطابق ملزمہ ثمرین محمود کو اس نے ریکارڈ میں منیجنگ ڈائریکٹر ظاہر کیا تھا مگر وہ  20 ہزار ماہانہ پر کام کرتی تھی۔ ایف آئی اے نے ملزمان کے خلاف دھوکہ دہی، فراڈ اور اینٹی منی لانڈرنگ کی دفعات کے تحت رواں سال مقدمہ نمبر 20 درج کیا تھا۔ مرکزی ملزم کے خلاف کیس میں پراسیکوشن نے شواہد پیش کرنے ہیں  اور وہ گرفتاری کے بعد سے ابتک جیل میں ہے۔گزشتہ روز ملزم کی جانب سے بھی ہائیکورٹ میں درخواست ضمانت دائر کی گئی ہے جس کی سماعت آئندہ ہفتے متوقع ہے۔

منظور

مزید :

ملتان صفحہ آخر -