عبدالستار ایدھی انڈر پاس،زندہ دلانِ لاہور کے لئے ایک اور تحفہ

عبدالستار ایدھی انڈر پاس،زندہ دلانِ لاہور کے لئے ایک اور تحفہ

  

وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی زیر نگرانی لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی شہر کی تعمیر و ترقی کے لئے دن رات کوشاں ہے۔ایل ڈی اے نے موجودہ حکومت کے دور میں کئی اہم منصوبے نہایت کم وقت میں مکمل کیے اور بہت سے منصوبوں پر تیزی سے کام جاری ہے۔ان میں ایک اہم ترین منصوبہ فیروز پورروڈ پر گلاب دیوی ہسپتال کے سامنے انڈر پاس کی تعمیرہے، اس منصوبے کو معروف سماجی شخصیت عبدالستارایدھی کے نام سے منسوب کیا گیا ہے۔ لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل احمد عزیز تارڑ نے دن رات نگرانی کر کے ”عبدالستار ایدھی انڈرپاس“ مقررہ وقت سے بھی پہلے مکمل کیااور اس کا باقاعدہ افتتاح 27دسمبر2021ء کو وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کیا۔

اس موقع پر وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ:ہم وزیرا عظم عمران خان کے ویژن کے مطابق یہاں Lahore Techno Polisبنا رہے ہیں۔اس منصوبے سے عالمی معیار کی ٹیکنالوجی، ریسرچ بیسڈ تعلیم اور Hi Techمینوفیکچرنگ کے مواقع پیدا ہوں گے۔ اس سے لاہور میں تعمیر و ترقی اور جدت کا ایک نیا دور شروع ہو نے جا رہا ہے۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ:”عبدالستار ایدھی انڈر پاس کی ضرورت اس لیے محسوس کی گئی کہ فیروز پورروڈشہر لاہور کا ایک مصروف ترین علاقہ ہے،یہاں پر ٹریفک کے مسائل بہت زیادہ تھے۔آلودگی،گردوغبار،بے ہنگم ٹریفک،گاڑیوں کاشوراور دیگر مسائل کی وجہ سے یہ علاقہ ترقی یافتہ شہر کا حصہ معلوم نہیں ہوتاتھا اوریہاں سے گزرنا انتہائی دشوار کام تھا، چنانچہ عوام کو ان مسائل سے نجات دلانے کے لئے یہاں پر انڈرپاس بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔عبدالستار ایدھی انڈر پاس سے شہر کے مصروف ترین روڈ سے گزرنے والی لاکھوں گاڑیوں کو براہ راست فائدہ ہورہا ہے۔ایک سروے کے مطابق روزانہ ایک لاکھ32ہزار سے زیادہ گاڑیوں اور موٹرسائیکلوں کو سہولت میسر آئی ہے۔ یہاں سے گزرنے والی ٹریفک کو سگنل فری راستہ میسر آیا ہے۔ عبدالستار ایدھی انڈر پاس سے لاہور، قصور سمیت فیروز پورروڈ سے ملحقہ آبادیوں کے لاکھوں مکینوں کو آمد و رفت میں بہت سہولت ملی ہے۔ان میں لاہور سینٹرل بزنس ڈسٹرکٹ،پیکو روڈ، ماڈل ٹاؤن کورٹس،ماڈل ٹاؤن،لاہور رنگ روڈ اور قصور سمیت گردو نواح کی دیگر آبادیاں شامل ہیں۔انڈر پاس کی تعمیر سے جہاں عام شہری مستفید ہورہے ہیں وہاں بڑے ہسپتالوں گلاب دیوی ہسپتال،چلڈرن ہسپتال، ایس او ایس چلڈرنز ویلیج،سوشل سیکورٹی ہسپتال، جنرل ہسپتال کے ہزاروں مریضوں اور ان کے لواحقین کو بھی بہت سہولت ملی ہے۔

وزیر اعلیٰ پنجاب نے کہا کہ:”عبدالستار ایدھی انڈر پاس  پر کل 65کروڑ 92لاکھ روپے لاگت آئی ہے۔ہم۔اس کے علاوہ  50کروڑ 70لاکھ روپے کی لاگت سے”لاہور برج“کی توسیع بھی کرر ہے ہیں۔ انڈر پاس کی تعمیر سے ایندھن کی مد میں سالانہ6کروڑ روپے کی بچت ہوگی۔یہ ایک ماحول دوست منصوبہ ہے اور اس سے آلودگی میں کمی واقع ہوگی اور شہریوں کے قیمتی وقت کی بھی بچت ہوگی۔انڈرس پاس میں بہترین نکاسی آب کا انتظام کیا گیا ہے،فٹ پاتھ اور واک ویز تعمیر کی گئی ہیں۔انڈرپاس کی لمبائی 540 میٹر اوریہ انڈر پاس تین تین لینز پر مشتمل ہے۔عبدالستا رایدھی انڈر پاس کی کلیرنس اونچائی 5.1 میٹر ہے،یہ انڈر پاس11.1 میٹر چوڑا ہے اور تین تین لینزپر مشتمل ہے۔اس کے ساتھ ساتھ اپروچ اور سروس روڈ کی بھی تعمیر و توسیع کی گئی ہے اور اس سے بارش کے پانی کی نکاسی کا خصوصی اہتمام کیا گیاہے“۔

وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے بتایا کہ:”مجموعی طور پراس منصوبے کی شفاف ٹینڈرنگ (Competitve Bidding)کے ذریعے ایک کروڑ 20لاکھ روپے بچت کی گئی اور اراضی کے حصول میں آٹھ کروڑ روپے کی بچت ہوئی ہے حالانکہ ماضی میں ایسے منصوبوں میں اراضی کے حصول کی مد میں اربوں روپے کے گھپلے ہوتے تھے۔انہوں نے کہا کہ:”عبدالستار ایدھی انڈر پاس منصوبے سے قبل بھی لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی طرف سے متعدد منصوبے پایہ تکمیل کو پہنچے ہیں اور بہت سے منصوبوں پر کام جاری ہے، ان منصوبوں کی مختصر تفصیل درج ذیل ہے۔

٭دو ارب 45کروڑ روپے سے لاہور کے چار بڑے پراجیکٹس پایہ تکمیل کو پہنچے۔ ایک ارب 70کروڑروپے کی لاگت سے لال شہباز قلندر انڈر پاس تعمیر کیاگیا۔5کروڑ روپے کی لاگت سے ٹھوکر نیاز میں لاہور کے داخلی مقام پر خوبصورت گیٹ ”باب لاہور“تعمیر کیا گیا۔50کروڑ روپے کی لاگت سے شہر کے مختلف بڑے روڈز پر ٹریفک جام کے پوائنٹس کا خاتمہ کیا گیا اور20کروڑ روپے سے لاہور میں مختلف مقامات پر شہریوں کے پیدل گزرنے کے لئے خصوصی پلوں کی تعمیر کی گئی۔

 ٭ اس وقت لاہور میں 9ارب 16کروڑ 70لاکھ روپے کی لاگت سے 3بڑے منصوبے تکمیل کے قریب ہیں۔50کروڑکی لاگت سے چلڈرن ہسپتال کے قریب لاہور برج پر اضافی لین کی تعمیر جاری ہے، 4ارب 90کروڑروپے سے داتا گنج بخش فلائی اووراور دوارب 54کروڑ 80لاکھ کی لاگت سے شاہکام چوک فلائی اوور کی تعمیر جاری ہے۔ 

٭ مذکورہ بالا میگا پراجیکٹس کے علاوہ ایل ڈی اے کے مزید 9ترقیاتی منصوبے 71ارب 36کروڑ روپے کی لاگت سے مکمل ہوں گے۔3ارب 40کروڑکی لاگت سے سگیاں روڈ کی تعمیر و توسیع کی جائے گی۔3ارب روپے کی لاگت سے مین بلیوار ڈ گلبرگ تا والٹن روڈ ڈیفنس موڑ سگنل فری کوریڈور بنایا جائے گا۔ 3ارب 41کروڑکی لاگت سے بابو صابو انٹر چینج سے رنگ روڈ تک بند روڈ کی تعمیر و توسیع اور گلشن راوی ٹی جنکشن پر انڈر پاس کی تعمیر کی جائے گی۔ ایک ارب 50کروڑکی لاگت سے سمن آباد موڑ ملتان روڈ پر انڈر پاس بنایاجائے گا۔شاہدرہ موڑ پر ملٹی لیول داخلی و خارجی راستے کی تعمیر 6ارب50کروڑ روپے سے ہوگی۔ 40کروڑ کی لاگت سے لاہور سکول آف اکنامکس تا بی آر بی نہر پل مین برکی روڈ کی دو رویہ تعمیر و توسیع کی جائے گی۔ 2ارب 90کروڑروپے سے کریم بلاک علامہ اقبال ٹاؤن پر انڈر پاس اور فلائی اوور تعمیر کیاجائے گا اور 24کروڑ روپے سے بابو صابو انٹر چینج کے ارد گرد ٹریک سرکولیشن میں بہتری کے لئے سٹرکوں کی تعمیر و بحالی کا کام کیاجائے گا……  ٭اس کے علاوہ ایل ڈی اے کا ا یک اہم ترین منصوبہ مین بلیوارڈ گلبرگ تا موٹر وے ایم ٹو”ایلی ویٹڈ ایکسپریس وے“ کی تعمیرہے جس پر61ارب روپے کی لاگت آئے گی۔ 

 لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی اسی طرح لاہور شہر میں بہت سے چھوٹے بڑے منصوبوں پر تیزی سے کام جاری رکھے ہوئے ہے۔بلاشبہ ان منصوبوں کی تکمیل سے شہر لاہور میں تعمیر و ترقی کا ایک نیا دور شروع ہوگا اورشہرکے عوام بہت جلد تمام ترقیاتی مسائل حل ہوتے دیکھیں گے۔ ان شاء اللہ۔ 

مزید :

رائے -کالم -