رشوت کے الزام میں ڈپٹی ڈائریکٹر اینٹی کرپشن تبدیل

رشوت کے الزام میں ڈپٹی ڈائریکٹر اینٹی کرپشن تبدیل

لاہور(خبر نگار) ادارہ رشوت ستانی کے سینئر افسر رشوت کو ختم کرنے کی بجائے خود رشوت لینے لگے تفصیلات کے مطابق نعیم الرحمٰن ڈپٹی ڈائریکٹر اینٹی کرپشن (ہیڈ کوارٹر) پنجاب نے ایک انکوائری اور تفتیش ملزمان کے حق میں فیصلہ دینے کے لئے ان سے چھ لاکھ روپے رشوت بذریعہ ندیم نائب قاصد ملزمان نے نائب قاصد مذکور اور ان کے درمیان ہونے والی گفتگو کو بذریعہ ٹیپ ریکارڈ موبائل فون ریکارڈ کے ڈی جی اینٹی کرپشن پنجاب کے پاس پیش کروں گا جو کہ نائب قاصد ملزمان اور نائب قاصد کے درمیان رشوت مانگنے سے متعلقہ بات چیت کی تردید نہ کر سکے۔ ڈی جی اینٹی کرپشن پنجاب نے ڈپٹی ڈائریکٹر کو بطور ڈی ڈی (1) ٹرانسفر کر دیا ہے جبکہ نائب قاصد کی محکمانہ انکوائری بذریعہ ڈی ڈی (ایڈمن) ہیڈ کوارٹرز کرنے حکم دیا ہے اور نائب قاصد کو فوری طور پر معطل کر دیا ہے۔ علاوہ ازیں مسٹر کنور خالد محمود ڈپٹی ڈائریکٹر(ایم اینڈ وی) ہیڈ کوارٹرز کو نئے ریگولر افسر کی آمد تک عارضی طور پر دیکھ بھال کرنے کے لئے جاری کیا ہے۔ باوثوق ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ نعیم الرحمٰن ڈپٹی ڈائریکٹر نے اپنا تبادلہ رکوانے کے لئے سیاسی اثر و رسوخ کا استعمال کرنا شروع کر دیا ہے جبکہ فریقینمقدمات و سائلان نے ڈپٹی ڈائریکٹر مذکور کے تبادلہ پر سکھ کا سانس لیا ہے اور ارباب اختیار سے مطالبہ کیا ہے کہ ندیم نائب قاصد جس نے اپنے افسر کے کہنے پر سائل نے چھ لاکھ روپے رشوت کا مطالبہکیا ہے از خود ایسا نہ کر سکتا تھا بلکہ اس نے نعیم الرحمٰن ڈپٹی ڈائریکٹر کے کہنے پر یہ مطالبہ کیا ہے جبکہ صرف ندیم نائب قاصد کو قربانی کا بکرا بنا کر معطل کیا گیا اور اس کے خلاف انکوائری کا حکم دیا گیا ہے اصل میں ڈپٹی ڈائریکٹر کو معطل کر کے لائن حاضر کیا جانا چاہئے تھا۔ یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ ڈائریکٹر جنرل انٹی کرپشن نے درخواست گذار سید محمد اکمل کی انکوائری بھی تبدیل کر دی ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...