ناکوں کے باوجود بینک ڈکیتی کی ،21جیولرز شاپس لوٹنے کی 50سے زائد وارداتیں

ناکوں کے باوجود بینک ڈکیتی کی ،21جیولرز شاپس لوٹنے کی 50سے زائد وارداتیں

لاہور (رپورٹ: یونس باٹھ) لاہور شہر میں جگہ جگہ پولیس ناکہ بندی ہونے کے باوجود ڈاکوﺅں نے دن دیہاڑے اسلحہ کے زور پر بینک ڈکیتی کی 21 وارداتوں اورجیولری کی 50 سے زائد وارداتوں کے دوران 4 ارب روپے سے زائد مالیت کا سونا اور نقدی لوٹ لی ہے۔ لاہور پولیس کسی ایک ملزم کو بھی گرفتار نہیں کرسکی اربوں روپے کی مراعات اور فنڈز لینے کے باوجود لاہور پولیس کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے۔ واضح رہے لاہور شہر میں وارداتوں میں اضافہ معمول بن گیا ہے اور پچھلے سال کی نسبت وارداتوں کی شرح میں اضافہ دوگنا سے بھی بڑھ گیا ہے۔ لاہور شہر میں بینک ڈکیتی اور جیولری کی وارداتیں کرنے والا گروہ پچھلے کئی مہینوں سے سرگرم ہے مگر پولیس انہیں گرفتار نہیں کرسکی۔ ہینڈ آﺅٹ اور دیگر بیان بازی میں ملزمان کی گرفتاری کے روزانہ دعوے کئے جارہے ہیں مگر وارداتوں میں کمی نہ آئی، اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ اصل ملزمان گرفتار نہیں ہوسکے۔ رواں سال کے دوران بینک ڈکیتی کی اب تک 9 جبکہ ایک سال کے دوران اب تک 21 وارداتیں ہوچکی ہیں مگر پولیس ان ملزمان کو گرفتار کرنے کے متعدد باردعوے کرچکی ہے، حقیقت میں ایک بھی ملزم گرفتار نہیں ہوسکا۔ لاہور شہر میں 4 درجن سے زائد جیولری کی وارداتیں بھی ہوچکی ہیں مگر پولیس ان ملزمان کا سراغ لگانے میں بھی ناکام ہے۔ لاہور پولیس کے سربراہ ایڈیشنل آئی جی محمد اسلم ترین نے مو¿قف اختیار کیا ہے کہ بینک ڈکیتی کی وارداتیں ضرور ہوئیں، گروہ ٹریس کرلیا گیا مگرانہیں گرفتار نہیں کیا جاسکا، گرفتاری کے لئے ٹیمیں کام کررہی ہیں۔

مزید : صفحہ آخر