سپریم کورٹ کی طرف سے سابق چیئرمین اوگرا کیخلاف توہین عدالت کیس پر نوٹسز جاری

سپریم کورٹ کی طرف سے سابق چیئرمین اوگرا کیخلاف توہین عدالت کیس پر نوٹسز جاری

اسلام آباد (آن لائن، ثناءنیوز) سپریم کورٹ نے سابق چیئرمین اوگرا توقیر صادق کیخلاف اپنے حکم پر عملدرآمد سے متعلق توہین عدالت کی ایک درخواست کے مقدمہ میں نیب اور کیبنٹ ڈویژن کو نوٹس جاری کردیئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سر براہی میں جسٹس جواد ایس خواجہ اور جسٹس خلجی عارف حسین پر مشتمل عدالت عظمی کے تین رکنی بینچ نے جمعرات کو اوگرا کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر کی جانب سے دائر توہین عدالت کی درخواست کی سماعت کی ۔ سماعت کے دوران ایگزیکٹو ڈائریکٹر محمد یٰسین نے عدالت کو بتایا کہ وہ وزارت پٹرولیم کے مستقل ملازم ہیں وہ چاہتے ہیں کہ کرپٹ افراد کو سر کاری عہدوں پر نہیں ہونا چاہیے۔ ان کا کہنا تھا کہ سپریم کورٹ نے نومبر 2011میں فیصلہ دیا۔ عدالتی فیصلے کے باوجود اوگرا میں کرپٹ اور بد عنوان افراد کو بتایا نہیں گیا ۔ ان کا کہنا تھا کہ عدالت نے ممبر گیس اور ممبر فنانس کو بھی کرپشن میں ملوث قرار دیا صرف ممبر گیس کو گرفتار کیا گیا ہے ممبر فنانس ابھی تک اپنے عہدے پر کام کر رہے ہیں۔ عدالت کا کہنا تھا کہ توہین عدالت کا معاملہ عدالت اور توہین کر نے والے کے درمیان ہوتا ہے اور عدالت اپنے فیصلوں پر عملدر آمد کو خود مانیٹر کرتی ہے جس پر درخواست گزار نے کہا کہ ان کا مقصد بھی یہی ہے کہ اداروں میں کرپٹ افراد نہیں ہونے چاہئیں۔ عدالت نے درخواست گزار کے دلائل سننے کے بعد تمام فریقین کو نوٹس جاری کر دیئے اور عدالتی فیصلے پر عملدر آمد کے حوالے سے رپورٹ طلب کر لی۔ واضح رہے کہ اس مقدمہ میں درخواست گزار نے سابق چیئر مین اوگرا توقیر صادق، سیکرٹری کابینہ ڈویژن ، سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ ڈویژن اور نیب کو فریق بنایا ہے۔ مقدمہ کی مزید سماعت 2ہفتوں تک ملتوی کر دی۔

مزید : صفحہ آخر